.

کرونا وائرس : الٹرا آرتھوڈکس اسرائیلی وزیر صحت مستعفی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیل کے وزیر صحت یعکوف لتزمین نے کرونا وائرس کے بحران سے نمٹنے میں ناکامی کے بعد مستعفی ہونے کا اعلان کردیا ہے اور کہا ہے کہ وہ نئی حکومت میں وزارت تعمیرات کا قلم دان سنبھالیں گے۔

الٹرا آرتھو ڈکس یعکوف لتزمین نے اتوار کو وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو سے ملاقات کی ہے اور انھیں وزارت چھوڑنے کے بارے میں اپنے ارادہ سے آگاہ کردیا ہے لیکن انھوں نے وزیر صحت کی حیثیت سے اپنی بُری کارکردگی کا استعفے میں کوئی حوالہ نہیں دیا ہے جس کی وجہ سے انھیں اسرائیلی کڑی تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں۔

وہ گذشتہ ایک عشرے میں زیادہ عرصہ وزارت صحت کے سربراہ رہے ہیں لیکن ان کی وزارت کرونا وائرس کی وبا کو پھیلنے سے روکنے کے لیے کوئی نمایاں کارکردگی دکھانے میں ناکام رہی ہے۔اب ان کا کہنا ہے کہ وہ وزارتِ تعمیرات کا قلم دان سنبھالیں گے۔

انھوں نے ایک بیان میں کہا ہے؛’’ میں نے چوتھی مرتبہ وزارت صحت میں نہ لوٹنے کا فیصلہ کیا ہے۔اس کے بجائے اب وزارت تعمیرات میں اسرائیل میں مکانوں کے بحران سے نمٹنے کے لیے ترقیاتی منصوبوں کی قیادت کروں گا۔‘‘

اسرائیل میں کرونا وائرس سے 15 ہزار سے زیادہ افراد متاثر ہوئے ہیں اور قریباً 200 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔اس کے آلٹرا آرتھوڈکس وزیر صحت لتزمین میڈیکل میں باضابطہ کسی تربیت کے حامل نہیں۔وہ نیوزکانفرنسوں میں کوئی تیاری کرکے نہیں کرتے تھے اور ملک میں لاک ڈاؤن کے لیے تجاویز کی بھی مخالفت کرتے رہے ہیں جس کی وجہ سے انھیں کڑی تنقید کا نشانہ بنایا جاتا رہا ہے۔ان کا یہ مؤقف رہا ہے کہ لاک ڈاؤن سے ملک کی مذہبی کمیونٹی متاثر ہوگی۔

اس ماہ کے اوائل میں خود لتزمین کا کرونا وائرس کا نتیجہ مثبت آیا تھا کیونکہ وہ اپنی ہی وزارت کی ہدایات کو ںظرانداز کرتے ہوئے یہود کی اجتماعی عبادات میں شریک ہوتے رہے تھے۔ تاہم اب وہ صحت یاب ہوچکے ہیں۔