.

ایران میں کرونا وبا کی دوسری لہر جلد آنے والی ہے: رکن پارلیمنٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایرانی پارلیمنٹ کے ایک رکن نے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ ملک میں کرونا کی وبا کی دوسری لہر جلد آنے والی ہے۔ انہوں نےیہ تنبیہ ایک ایسے وقت میں کی ہے جب ایرانی حکومت نے گذشتہ ہفتے لاک ڈائون میں نرمی کرتے ہوئے بعض شہروں میں کاروباری سرگرمیاں شروع کرنےکی اجازت دی تھی۔ ایران میں پھیلنے والی کرونا وبا نے ہزاروں افراد کی جانیں لے لی ہیں۔

ایرانی پارلیمنٹ کے رکن اور قومی سلامتی و خارجہ پالیسی کمیٹی چیئرمین محمد جواد جمالی نو بند جانی نے کہا کہ ایران میں ممکنہ طور پر کرونا کی وبا کی دوسری لہر سے بڑی تعداد میں لوگ متاثر ہوسکتے ہیں۔

انہوں نے کرونا وبا کے حوالے سے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے میں غفلت برتنے والے شہریوں کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا۔ اور کہا بعض لوگ وبا کے معاملے میں مجرمانہ غفلت کا مظاہرہ کرتےہیں۔ عوام کی طرف سے یہ لاپرواہی ملک میں کرونا کی ایک اور لہر پیدا کرسکتی ہے۔

خبر رساں ایجنسی 'ایلنا' کے مطابق رکن پارلیمنٹ محمد جواد جمالی نے کہا کہ شیراز اورفارس کے شہروں میں لوگوں کا غیرمعمولی ھجوم بازاروں اور سڑکوں میں کسی قسم کی احتیاطی تدابیر کے بغیر روزانہ دیکھا جا رہا ہے۔ لوگ نہ تو سماجی دوری کا خیال رکھتے ہیں اور نہ ہی ان کے چہروں پر ماسک ہوتے ہیں۔ عوام کی یہ لاپر واہی دوبارہ کرونا پھیلا سکتی ہے۔

خیال رہے کہ ایرانی وزارت صحت کے مطابق اتوار کے روز ایران میں کرونا کے مزید 1383 کیسز سامنے آئے ہیں جس کے بعد متاثرین کی تعداد ایک لاکھ 76 ہزار 03 ہوگئی ہے جب کہ مزید 51 ہلاکتوں کے بعد کل ہلاکتوں کی تعداد 6640 ہوگئی ہے۔