.

بشارالاسد کے کزن رامی مخلوف سیریا ٹیل کی سربراہی چھوڑنے سے انکاری، گرفتاریوں کی مذمت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شامی صدر بشارالاسد کے کزن اور ملک کی بڑی کاروباری شخصیت رامی مخلوف نے مرکزی موبائل فون کمپنی سیریا ٹیل کی سربراہی چھوڑنے سے انکار کردیا ہے اور کہا ہے کہ ان کی کمپنی کے مینجروں کی گرفتاریاں شامی معیشت کے لیے تباہ کن ثابت ہوں گی۔

رامی مخلوف نے اپنے فیس بُک اکاؤنٹ پر ایک نئی ویڈیو جاری کی ہے۔اسد حکومت کے ساتھ تنازع کے بعد ان کی یہ تیسری ویڈیو ہے۔وہ اس سے پہلے شامی صدر کی سکیورٹی فورسز اور ٹیکس حکام کی موبائل فون کمپنی کی انتظامیہ کے خلاف کارروائیوں کی مذمت کرچکے ہیں۔

انھوں نے پہلے یہ شکایت کی ہے کہ ان کے حکومت کے ساتھ تعاون کے باوجود شامی سکیورٹی فورسز سیریا ٹیل کے ملازمین کو گرفتار کررہی ہیں۔

انھوں نے نئے ویڈیو بیان میں کہا ہے کہ ’’ آج مجھ پر غیر انسانی انداز میں دباؤ ڈالا جارہا ہے ،سکیورٹی سروسز نے میرے ملازمین کی گرفتاریاں شروع کررکھی ہیں۔‘‘

قبل ازیں رامی مخلوف نے یہ شکایت کی تھی کہ’’شامی حکومت مجھ سے مزید رقوم ادا کرنے کا مطالبہ کررہی ہے اور اس سلسلے میں مجھ پر دباؤ ڈالا جارہا ہے کہ میں اپنے ملازمین کی تعداد میں نصف تک کمی کردوں۔‘‘

انھوں نے کہا کہ’’میں اپنے ملازمین پر ایک کروڑ لیرا خرچ کرتا ہوں،وہ مجھے کہہ رہے ہیں کہ اس میں کٹوتی کرکے میں یہ رقم پچاس لاکھ لیرا کردوں لیکن یہ تو حقیقی اخراجات ہیں۔‘‘

رامی مخلوف کے ان ویڈیو بیانات سے شام کی حکمراں اشرافیہ کے درمیان اختلافات کی بھی عکاسی ہوتی ہے۔بعض اطلاعات کے مطابق رامی مخلوف نے اپنے پھوپھی زاد صدر سے ملاقات کی کوشش کی ہے لیکن بشار الاسد نے ان کا فون تک سننے سے انکار کردیا ہے۔