.

اخراجات میں کمی زیرِ غور ہے ، ملازمتوں میں ابھی تک کمی نہیں کی: ایمریٹس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دبئی کی قومی فضائی کمپنی ایمریٹس کا کہنا ہے کہ "کمپنی کی جانب سے ملازمین کی ایک بڑی تعداد کو فارغ کرنے کے حوالے سے کوئی فیصلہ یا اعلان نہیں کیا گیا ،، جیسا کہ متعدد ذرائع ابلاغ میں یہ خبر زیر گردش ہے"۔

ایمریٹس کے ترجمان کے مطابق اس حوالے سے کوئی بھی فیصلہ کیا گیا تو اس کا اعلان مروجہ انداز سے کیا جائے گا .. البتہ ہم نے دیگر فضائی کمپنیوں کی طرح ایگزیکٹو ٹیم سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ دنیا کو درپیش موجودہ صورت حال کی روشنی میں اخراجات پر جامع طور سے نظر ثانی کی جائے .. یہ اقدام ایسے وقت میں سامنے آ رہا ہے جب ہم اپنی معمول کی سرگرمیوں کو بتدریج دوبارہ شروع کرنے کی تیاری کر رہے ہیں۔

اس سے قبل بلومبرگ نیوز ایجنسی نے باخبر افراد کے حوالے سے بتایا تھا کہ کرونا وائرس کے سائے میں ایمریٹس گروپ تقریبا 30 ہزار ملازمین کو فارغ کرنے کی منصوبہ بندی کر رہا ہے۔

روئٹرز نیوز ایجنسی کے مطابق اس اقدام سے ایمریٹس گروپ کے ملازمین کی تعداد میں 30% کے قریب کمی آجائے گی۔ رواں سال مارچ کے آخر تک گروپ کے ملازمین کی تعداد ایک لاکھ پانچ ہزار (1.05 لاکھ) سے زیادہ تھی۔

ایمریٹس گروپ میں ایمریٹس ایئرلائن اور دناتا پیسنجر سروس شامل ہے۔

ایمریٹس ایئرلائن 21 مئی سے 9 شہروں کے لیے معمول کی پروازیں دوبارہ شروع کرنے کا اعلان کر چکی ہے۔ یہ نو شہر لندن (ہیتھرو)، فرینکفرٹ، پیرس، میلان، میڈرڈ، شکاگو، ٹورنٹو، سڈنی اور میلبرن ہیں۔

دبئی حکومت کے زیر انتظام فضائی کمپنی نے رواں سال 31 مارچ 2020 کو اختتام پذیر ہونے والے مالیاتی سال میں 28.75 کروڑ ڈالر کا منافع حاصل کیا۔ اس کے مقابلے میں گذشتہ برس کمپنی کے منافع کا حجم 23 کروڑ ڈالر کے قریب رہا تھا۔