.

سعودی عرب کی 98 ہزار مساجد میں نماز پرپابندی کے 70 روز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

کرونا کی وبا کے خطرے کے پیش نظر70 روز قبل سعودی عرب کی سینیر علماء کونسل نے ملک بھرکی 98 ہزار مساجد میں با جماعت عبادت اور نمازوں کی ادائی پر پابندی عاید کردی تھی۔ مسجد حرام اور مسجد نبوی میں انتہائی محدود نمازیوں اورانتظامیہ کے ارکان کو حفاظتی اصولوں کے مطابق نماز کی ادائی کی اجازت تھی جب کہ دیگر مساجد میں صرف اذان کی اجازت دی گئی تھی۔

سعودی عرب کی حکومت نے 8 شوال بہ روز اتوار کو28 شوال جمعہ تک مکہ مکرمہ می مساجد کے سوا دیگر مملکت کی مساجد میں فرض نمازوں اور جمعہ کی نماز کی اجازت دے دی گئی ہے۔

ماہ صیام آخر میں حکومت نے عید الفطر پر مساجد سے عید کی تکبیرات بلند کرنے کی اجازت دی گئی ہے۔

حرمین شریفین کی جنرل پریزی ڈنسی کے صدر ڈاکٹر عبد الرحمن السدیس نے بھی خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبد العزیز آل سعود کی منظوری سے مسجد حرام اور مسجد نبوی میں محدود نمازیوں کی موجودگی میں عید کی نماز کی اجازت دی گئی تھی۔ سعودی عرب میں کرونا کی وجہ سے مساجد میں نمازوں کی ادائی پر پابندی کے 70 روز بعد 8 شوال سے 28 شوال کےدرمیان مساجد میں با جماعت اور جمعہ کی نمازوں کی اجازت دی گئی ہے۔ مساجد میں نماز کی ادائی کی اجازت کے ساتھ ساتھ شہریوں کو سخت حفاظتی اقدامات کی تاکید کی گئی ہے۔