سعودی ولی عہد اور روسی صدر کے درمیان عالمی توانائی مارکیٹ پر بات چیت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز اور روسی صدر ولادی میر پوتین کے درمیان ٹیلیفون پر تبادلہ خیال ہوا جس میں دونوں رہ نمائوں نے عالمی منڈی میں تیل کی قیمتوں، پیداوار اور کھپت سمیت دیگر امور پر بات چیت کی۔

کریملن نےخبررساں دارے "رائیٹرز" کوبتایا کہ صدر پوتین اور شہزادہ محمد بن سلمان تیل کی پیداوار میں کمی پر قریبی تعاون بڑھانے پر متفق ہوگئے ہیں۔

یہ بات چیت آئل کانفرنس سے دو ہفتہ قبل ہوئی ہے۔

روسی حکام نے مزید کہا کہ صدر پوتین نے تیل کی پیداوار کو روکنے کے لئے اوپیک + گروپ کے فریم ورک کے تحت اپریل میں طے پانے والے معاہدوں کو عملی جامہ پہنانے کے لیے مشترکہ کوششوں کی اہمیت پر زور دیا۔

ماسکو کا کہنا ہے کہ سعودی عرب اور روس کی پٹرولیم کی وزارتیں تیل کی پیداوار اور اس کے دیگر امور پرایک دوسرے کے ساتھ مل کر کام کرنے پر متفق ہیں۔

پٹرولیم برآمد کرنے والے ممالک کی تنظیم (اوپیک) اور روس کی سربراہی میں تیل کے دیگر بڑے پیداواری ممالک نے مئی اور جون میں اپنے تیل کی پیداوار میں 10 ملین بیرل روزانہ کم کرنے پر اتفاق کیا ہے تاکہ کرونا وائرس متاثرہ خام منڈی کے جمود کو دور کیا جاسکے۔

توقع کی جارہی ہے کہ اوپیک + گروپ جون کے دوسرے ہفتے میں اپنی پروڈکشن پالیسی پر تبادلہ خیال کے لیے ایک ورچوئل کانفرنس کرے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں