قومی وفاق سے مذاکرات سے قبل ترکی کو لیبیا سے نکلنا ہوگا: حفتر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

لیبیا کے متحارب فریقین کے درمیان جنگ بندی کے لیے مذاکرات کی خبروں کے جلو میں باغی فوج کے سربراہ جنرل خلیفہ حفتر نے ایک بار پھر باور کرایا ہے کہ قومی وفاق حکومت کے ساتھ مذاکرات سے قبل ترکی کو لیبیا سے نکلنا ہوگا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایک بیان میں خلیفہ حفتر کا کہنا تھا کہ قومی وفاق حکومت کے ساتھ وہ اسی صورت میں مذاکرات کرسکتے ہیں کہ پہلے لیبیا میں موجود تمام غیرملکی جنگجو بالخصوص ترک فوج اور ترکی کے حمایت یافتہ گروپوں کو دیس نکالا دیا جائے۔

لیبیا کی نیشنل آرمی کے سربراہ کا کہنا تھا کہ ترکی کے لیے لیبیا کی سرزمین میں کوئی جگہ نہیں۔ انہوں نے لیبی فوج پر عالمی سطح پر اسلحے کے حصول پرعاید کردہ پابندیاں ختم کرنے اور مصر سے لیبیا میں ترکی کی دراندازی روکنے کے لیے کرداردا کرنے کا مطالبہ کیا۔

انہوں نے لیبیا میں ترکی کی مداخلت روکنے کے لیے عرب ممالک کے مشترکہ مانیٹرنگ نگرانی کے معاہدے کو فعال بنانے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

دریں اثنا مصری حکومت نے خلیفہ حفتر کو یقین دلایا ہے کہ قاہرہ حکومت لیبی فوج کو اسلحہ کی فراہمی کے ساتھ ساتھ لیبیا میں ترکی کی مداخلت روکنے کے لیے تمام ممکن اقدامات کرے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں