.

الدّرعيہ : 574 برس سے سعودی تاریخ کی علامت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض کے اطراف بہت سے ایسے قدیم مقامات موجود ہیں جو تاریخی لحاظ سے اہمیت اور گہرے اثرات کے حامل ہیں۔ ان میں نمایاں ترین نام "الدرعيہ" کا ہے جس کی بنیاد 574 برس قبل 1446ء میں پڑی۔ الدرعیہ میں بہت سے اہم مقامات ہیں جن میں البجیری کا تاریخی علاقہ، سمحان کا علاقہ، "الطریف کا محلّہ" جسے دنیا میں مٹی کے بنے سب سے بڑے شہروں میں سے قرار دیا گیا اور اس کے علاوہ ریاض کے مغرب میں واقع شان دار سیاحتی یادگار مقامات شامل ہیں۔

الطریف کے محلے کو دنیا بھر میں اُس وقت شہرت ملی جب اسے 2010 میں یونیسکو کی عالمی ورثے کی فہرست میں شامل کر لیا گیا۔ اس طرح یہ تنظیم کی فہرست میں درج سعودی عرب کے پانچ مقامات کے ساتھ شامل ہو گیا۔ یہ سعودی ریاست کی تاریخ کی جان کاری حاصل کرنے کے لیے ایک اہم باب کی حیثیت رکھتا ہے۔

سعودی سرکاری خبر رساں ایجنسی (ایس پی اے) کی رپورٹ میں بتایا گیا کہ پہلی سعودی ریاست میں جب الدرعیہ ترقی کی منازل طے کر رہا تھا تو الطریف کا تاریخی محلہ اس وقت ریاست کی حکمرانی کا صدر مقام تھا۔ اس محلے میں فی الوقت متعدد میوزیم موجود ہیں۔ ان میں نمایاں ترین الدرعیہ میوزیم ہے۔ یہ میوزیم فن پاروں، تصاویر اور دستاویزی فلموں کے ذریعے پہلی سعودی ریاست کی تاریخ اور ترقی پیش کرتا ہے۔ اس کے علاوہ گھوڑوں کا میوزیم، حربی میوزیم اور جامع مسجد امام محمد بن سعود (الجامع الكبير) بڑی اہمیت کی حامل ہے۔ ریاست کے آئمہ یہاں نماز جمعہ میں لوگوں کی امامت کیا کرتے تھے۔

الطریف کا محلہ ہزاروں مربع میٹر پر مشتمل سرسبز میدانوں کے سبب امتیازی خصوصیت رکھتا ہے۔ ہزاروں مقامی اور کھجور کے درخت وادی حنیفہ کے کنارے دور تک پھیلے ہوئے ہیں۔ ان کے علاوہ جدید طریقوں سے بنی فٹ پاتھ اور راہ داریاں چہل قدمی میں مددگار ثابت ہوتی ہیں۔

وادی حنیفہ کے دوسرے کنارے پر "البجیری" کا تاریخی علاقہ واقع ہے۔ یہ علاقہ علم پھیلانے کے حوالے سے تاریخی اہمیت کا حامل ہے۔ ان دنوں وہ اپنے تجارتی مراکز، قہوہ خانوں اور تفریح کی کھلی جگہاؤں کے سبب امتیازی حیثیت رکھتا ہے۔ مذکورہ علاقے میں ان دنوں ترقیاتی کام زور و شور سے جاری ہے۔ یہ کام ایک ضخیم ترقیاتی منصوبے کا حصہ ہے جس کا مقصد الدرعیہ کو ایک تاریخی ، ثقافتی اور سیاحتی علامت میں تبدیل کرنا اور لوگوں کے جمع ہونے کا ایک عالمی سطح کا مقام بنانا ہے۔

الدرعیہ کے ترقیاتی منصوبوں کی نگرانی ایک خصوصی اتھارٹی کر رہی ہے جس کا قیام 2017 میں عمل میں آیا تھا۔ ان میں اہم ترین منصوبہ "الدرعیہ گیٹ وے" کا ہے۔ اس منصوبے کا افتتاح خادم حرمین شریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز آل سعود نے نومبر 2019 میں کیا تھا۔