.

حرم مکی کی تعمیرو مرمت اور توسیع تصاویر کے آئینے میں!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی جامع ام القریٰ کے زیراہتمام شاہ سلمان بن عبدالعزیز اسٹڈی سینٹر نے حرم مکی شریف کی مرمت اور توسیع کی 70 نایاب تصاویر جاری کی ہیں۔ ان تصاویر میں حج کے سفر، سقایہ، رفادہ اور مشاعر مقدسہ میں حجاج کرام کو دی جانے والی سہولیات کی 150 سالہ تاریخ کی عکاسی کی گئی ہے۔

Masjid Haram

شاہ سلمان بن عبدالعزیز چیئر کے سربراہ ڈاکٹر عبداللہ الشریف نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے کہا کہ چیئر نے ڈیڑھ سو سال قبل سے آج تک مسجد حرام، حرم مکی اور مشاعرمقدسہ کی ستر نایاب تصاویر جمع کیں۔ ان تصاویر سے سعودی عرب کی حکومت کی نگرانی میں حج وعمرہ کے لیے دی جانے والی سہولیات، حکومت کی خدمات، حرم کی توسیع، اس کی صفائی ستھرائی، امن امان کے اقدامات اور اللہ کے مہمانوں کو فراہم کی جانے والی خدمات کی عکاسی ہوتی ہے۔ ان تصاویر کو دیکھ کر اندازہ لگایا جاسکتا ہےکہ برس ہا برس سے سعودی عرب کی حکومت ہرسال لاکھوں فرزندان توحید کی حج اور عمرہ میں احسن طریقے سے میزبانی کا فریضہ انجام دیتی چلی آئی ہے۔

Masjid Haram

ڈاکٹر الشریف کا کہنا تھا کہ اللہ کے مہمانوں کی سہولت، مشاعر مقدسہ میں عبادات کی ادائی میں آسانی،حجاج اور متعمرین کی خدمت سعودی حکومت کی اولین ترجیح رہی ہے۔ مملکت آل سعود کے بانی شاہ عبدالعزیز آل سعود اور اس کے بعد ان کی اولاد نے حجاج بیت اللہ اور معتمرین کی خدمت اور انہیں مناسک کی ادائیگی میں ہرممکن سہولیات فراہم کرنے میں کوئی کسرباقی نہیں چھوڑی۔ سعودی عرب کی موجودہ حکمران قیادت نے حسب توفیق حرم میں توسیع کے منصوبے جاری رکھے جس کے نتیجے میں آج لاکھوں افراد حج بیت اللہ کی سعادت حاصل کرنے میں کوئی دشواری محسوس نہیں کرتے۔

Masjid Haram

انہوں نے کہا کہ شروع میں حکومت نے مکہ معظمہ اور مدینہ منورہ جیسے دو بڑے شہروں پر توجہ مرکوز کی۔ ان شہروں میں آنے والے زائرین اور حجاج کرام کو زیادہ سے زیادہ سہولیات فراہم کی گئیں۔ ان کی صحت کی حفاظت کو یقینی بنانے کے موثر اقدامات کیے گئے۔

Masjid Haram

شاہ عبدالعزیز بن عبدالرحمان آل سعود کے دور میں مکہ مکرمہ میں غلاف کعبہ تیار ہونا شروع ہوا۔ انہی کے دور میں مسجد حرام میں روشنی کا نیا نظام نصب کیا گیا۔ مسجد میں سایہ دان بنائے گئے۔ اس کے ساتھ ساتھ مسجد حرام کی توسیع کے منصوبوں کا آغاز ہوا۔

Masjid Haram

آل سعود کے عہد میں مسجد حرام کی تین بار توسیع کی جا چکی ہے۔ شاہ عبدالعزیز آل سعود کے دور میں شروع کی جانے والی توسیع شاہ فیصل کے دور میں مکمل ہوئی۔ اس کے بعد شاہ خالد نے دوسری توسیع کا آغاز کیا۔ جو شاہ فہد کے دور میں مکمل ہوا۔اس توسیع میں الحزرہ بازار کو مسجد حرام کا حصہ بنا دیا گیا۔ مسجد کے صحن کشاہ کیے گئے اور برقی زینے اور مطاف کا گرائونڈ فلور تیار کیا گیا۔

Masjid Haram

تیسری توسیع شاہ عبداللہ کے دور میں شروع کی گئی جو اب بھی جاری ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں