.

'جی 20' کا قرض ادائیگیوں کو کچھ عرصے کے لیے منجمد کرنے پرغور

مانیٹری فنڈ کی 80 ارب ڈالر قرض کی 77 درخواستوں کی منظوری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے وزیر خزانہ محمد الجدعان نے کہا کہ 42 ممالک نے قرض کی خدمت کی ادائیگیوں کو منجمد کرنے کے لیے 'جی 20' سے اقدامات کرنے کو کہا ہے۔

الجدعان نے مزید کہا کہ 'جی 20' قرضوں کے انجماد اقدام کو 2020 سے آگے بڑھانے پر غور کرے گا۔ گروپ آف ٹوئنٹی نے کہا کہ آئی ایم ایف نے 80 ارب ڈالر کی مدد کی 77 درخواستوں کی منظوری دی ہے۔ سعودی عرب نے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ 'جی -20' نے مملکت کی سربراہی میں ماحول سے متعلق دو خصوصی اقدامات اپنائے ہیں۔ پہلے کا تعلق صحرا کو کم کرنے اور سبز علاقوں میں اضافے سے ہے اور دوسرا کاربن سرکلر معیشت کے تصور کو اپناتا ہے جس سے ماحولیات کے تحفظ اور وسائل کو برقرار رکھنے میں مدد ملے گی۔

الجدعان نے اقوام متحدہ کی معاشی اور سماجی کونسل کے زیر اہتمام پائیدار ترقی سے متعلق ایک اعلی سطحی سیاسی فورم میں اپنی شرکت کے دوران 17 جولائی 2020 کے دوران ' جی 20' کے رواں سال سعودی عرب کی میزبانی میں ہونے والے اجلاس کی تیاریوں پر بھی روشنی ڈالی۔

سعودی عرب کے وزیر خزانہ الجدعان نے وضاحت کی کہ کرونا وبائی بیماری نے دنیا کے تمام حصوں میں روزمرہ کی زندگی پر گہرے منفی اثرات مرتب کیے ہیں۔ اس کا براہ راست اثر صحت ، معیشت ، ملازمتوں اور رسد کے تسلسل پر پڑا ہے ، جبکہ معاشی ، معاشرتی اور ماحولیاتی نظام کی تشکیل نو کے لیے ایک قابل قدر موقع پیدا ہوا ہے تاکہ زندگی کے معیار کو بہتر بنانے پر توجہ دی جا سکے۔

الجدعان نے مزید کہا کہ اس سال فورم کی دلچسپی "کام کے طریقہ کار کو تیز کرنے اور تبدیلی کے راستے اپنانے پر مرکوز ہو گی۔
انہوں نے نشاندہی کی سعودی عرب کی حکومت نے صحت کے شعبے میں سب سے پہلے بجٹ میں مختص کی جانے والی رقم کا سب سے پہلے جائزہ لینے اور انتہائی ضرورت مند شعبوں کی مدد کرنے کا کام کیا ہے۔

غریب ممالک کے قرضوں سے نجات کے لیے بڑھتے ہوئے مطالبات کے درمیان ، جی 20 کے وزرائے خزانہ اور مرکزی بینکوں نے کرونا وائرس سے پیدا ہونے والی کساد بازاری میں عالمی معیشت کو متحرک کرنے کی کوشش تیز کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔
سعودی عرب کی میزبانی میں ہونے والی ورچوئل کانفرنس ایسے وقت میں سامنے آئی ہے جب کرونا وبا عالمی معیشت کو نقصان پہنچا رہی ہے ، جبکہ ماہرین غربت سے متاثرہ ترقی پزیر ممالک میں قرضوں کے بحران کی وارننگ دے رہے ہیں۔

سعودی وزیر خزانہ محمد الجد عان اور مرکزی بینک کے گورنر احمد الخلیفی کی زیرصدارت یہ مذاکرہ دو روزہ سربراہ اجلاس کے آغاز کے روز کے بعد ہو رہے ہیں۔ اس اجلاس میں یورپی یونین کے ممالک پانچ ماہ کے بعد پہلی بار کسی عالمی فورم پر عالمی کساد بازاری کی روک تھام کے لیے غور کرنے جا رہے ہیں۔