شاہ عبدالعزیز لائبریری اور عراق کے کتب خانوں کے درمیان ثقافتی تعامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی دارالحکومت ریاض میں شاہ عبدالعزیز لائبریری کی جانب سے عرب اور اسلامی دنیا میں کتب خانوں کے نیٹ ورک کے ساتھ مربوط ہونے کے سلسلے میں بڑے پیمانے پر اقدامات کا سلسلہ جاری ہے۔ ان اقدامات کا مقصد مذکورہ کتب خانوں کے ساتھ تعاون اور رابطہ کاری کے ذریعے معلومات منظم کرنے کے میدان میں مشترکہ اہداف کے حصول کو یقینی بنانا ہے۔

اسی سلسلے میں شاہ عبدالعزیز لائبریری نے عراق کے متعدد کتب خانوں کے ساتھ نمایاں نوعیت کی شراکت قائم کی ہے۔ اس کا مقصد عراقی ثقافت کے خزانوں کو ایک ہال میں جمع اکٹھا کر دینا ہے تا کہ دنیا کے کسی بھی کونے سے محققین عراقی کتب خانوں کے تمام مواد اور لٹریچر تک پہنچ کر ان سے استفادہ کر سکیں۔

شاہ عبدالعزیز لائبریری کے نگرانِ عام ڈاکٹر عبدالکریم الزید نے بتایا کہ شاہ عبدالعزیز لائبریری عراقی کتب خانوں کے حوالے سے توجہ دے رہی ہے۔ اس مقصد کے لیے متعدد منصوبے ترتیب دیے گئے ہیں۔ ان کے علاوہ کئی ثقافتی پروگرام بھی جاری ہیں۔ اس طرح عراقی ثقافت کے منظر نامے کے ساتھ جان کاری کا سفر چلتا رہے گا۔ عراق کا تاریخی ورثہ علمی لحاظ سے مالا مال ہے۔ یہاں کے لغوی مکاتب فکر نے عربی زبان اور ادب کی ترقی اور بہبود میں نمایاں کردار ادا کیا۔ ان میں کوفہ، بصرہ اور بغداد کے مراکز شامل ہیں جو اسلامی معارف اور علوم کی حفاظت میں بڑے کردار کے حامل ہیں۔

ڈاکٹر الزید نے واضح کیا کہ شاہ عبدالعزیز لائبریری عراقی کتب خانوں کے ساتھ ثقافتی تعلقات مضبوط بنانے کی شدید خواہش رکھتی ہے۔ اس سلسلے میں متعلقہ امور میں دل چسپی رکھنے والے ماہرین کے لیے تربیتی کورسز بھی منعقد ہوں گے۔

ڈاکٹر الزید نے امید ظاہر کی کہ سعودی عرب اور عراق کے درمیان ثقافتی میدان میں ترقی کے نئے باب سامنے آئیں گے۔

شاہ عبدالعزیز لائبریری کی جانب سے ایک منصوبہ عمل میں لایا جا رہا ہے۔ اس کا مقصد عرب دنیا کے کتب خانوں کے درمیان تعاون کی فضا قائم کرنا ہے۔ منصوبے کو "مركز الفهرس العربي الموحد" یعنی Arabic Union Catalog کا نام دیا گیا ہے۔ منصوبے کے تحت عرب دنیا کی علمی اور ادبی شخصیات کی 20 لاکھ سے زیادہ تحریروں کا تفصیلی ریکارڈ درج کیا گیا ہے۔ان میں عراقی مصنفین اور مؤلفین شامل ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں