.

سعودی لڑکی نے الیکٹرانک فٹ بال میں بین الاقوامی چیمپئن شپ جیت لی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی ایک نوجوان فٹ بالر "نجد فہد" نے بین الاقوامی فٹ بال فیڈریشن کے زیراہتمام آن لائن فٹ بال کا ایک بین الاقوامی مقابلہ جیت لیا۔

العربیہ ڈاٹ‌نیٹ‌ کے مطابق "فیفا 20" یونیورسٹیوں کے لیے الیکٹرانک فٹ بال چیمپیئن شپ جیتنے والی سعودی دو شیزہ "نجد فہد" اس کامیابی کو فٹ بال کے عملی میدان میں اہم پیش رفت قرار دیا ہے۔ مقابلے کے سیمی فائنل میں اس کا مقابلہ امارات کی حریف ٹیم اور فائنل میں برازیلی ٹیم کے ساتھ تھا۔ نجد نے پہلے مرحلے میں اپنے حریف کو 3-1 اور دوسرے مرحلے میں 3-0 سے شکست دی۔ اس مقابلے کے لیے ای سپورٹ اور سونیک کی طرف سے تعاون کیا گیا تھا۔

خیال رہے کہ 'فیفا 20' یونیورسٹی چیمپیئن شپ ایک بین الاقوامی مقابلہ ہے جس میں فیفا کے رکن ممالک کے کھلاڑی حصہ لیتے ہیں۔
اس موقعے پر 23 سالہ نجد نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مجھے ای کھیل اور ذہنی ایسوسی ایشن کی خوبصورت حمایت حاصل تھی جس نے مجھے ٹورنامنٹ میں حصہ لینے کے لیے نامزد کیا یہاں تک کہ میں نے فیصلہ کن میچ میں برازیل کی ٹیم کو شکست دینے کے بعد میچ اپنے نام کرلیا۔

اس نے مزید کہا کہ میں 12 سالوں سے الیکٹرانک فٹ بال کے میدان میں ہوں اور میں اپنے اہل و عیال کی حمایت کے درمیان روزانہ کئی گھنٹوں سے روزانہ تربیت حاصل کر رہی ہوں۔ خاص طور پر چونکہ میرے بھائی بھی الیکٹرانک کھیلوں میں پیشہ ور ہیں۔ اس لیے میرا خاندان میری بھرپور مدد کر رہا ہے۔

سعودی یونیورسٹیوں کے اسپورٹس فیڈریشن کے صدر ڈاکٹر خالد المزینی نے سعودی عرب ٹیم کی کھلاڑی "نجد فہد" کی ای فٹ بال ورلڈ چیمپیئن شپ میں بہترین کارکردگی کو سراہا۔ ان کا کہنا تھا کہ نجد فہد کی کامیابی اس بات کا ثبوت ہے کہ سعودی عرب کی جامعات میں صحت تفریحی سرگرمیوں مثبت پیش رفت ہو رہی ہے۔ نجد فہد کی کامیابی اس کی بہترین مثال ہے۔