.

تونس: عبوری وزیر داخلہ وزیراعظم مقرر، نئی کابینہ تشکیل دینے کی دعوت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تونس کے صدر سعید قیس نے وزیرداخلہ ھشام المشیشی کو نیا وزیراعظم مقرر کرتے ہوئے انہیں کابینہ تشکیل دینے کی دعوت دی ہے۔
تونس کی سرکاری نیوز ایجنسی کے مطابق صدر سعید نے ملک میں جاری سیاسی بحران کے خاتمے کے لیے عبوری وزیر داخلہ ھشام المشیشی کو وزارت عظمیٰ کے عہدے پر فائز کرتے ہوئے انہیں کابینہ تشکیل دینے کی دعوت دی ہے۔

خیال رہے کی تونس کی مذہبی جماعتوں کی طرف سے وزارت عظمیٰ کے لیے 10 امیدواروں کے نام پیش کئے گئے تھے مگر صدر نے آئین میں موجود اپنے اختیارات کا استعمال کرتے ہوئے اپنی مرضی کا امیدوار نامزد کیا ہے۔

خیال رہے کہ تونس کے آئین میں صدر کو یہ اختیار ہے کہ وہ سیاسی جماعتوں کی جانبب سے تجویز کردہ کسی وزیر یا وزارت عظمیٰ کے امیدوار کو قبول یا مسترد کر

سکتا ہے۔ صدر اپنی مرضی کے مطابق کسی بھی شخصیت کو اس کی قابلیت کی بنیاد پر وزارت عظمیٰ کا عہدہ سونپ سکتا ہے۔

تونس کے سبکدوش ہونے والے وزیراعظم الیاس فخفاح کےاستعفے کے بعد صدر کو 10 ناموں کی ایک فہرست ارسال کی تھی جس میں ترقی و سرمایہ کاری کے سابق وزیر الفاضل عبدالکافی اور سابق وزیرخزانہ حکیم بن حمودہ کےنام بھی شامل تھے۔

صدر کی طرف سے کابینہ تشکیل دینے کی دعوت کے بعد نامزد وزیراعظم کے پاس ایک ماہ میں حکومت کی تشکیل کا اختیار ہوگا۔ وزیراعظم کو پارلیمنٹ کے 217 ارکان میں میں سے کم 109 کی حمایت حاصل کرنا ہوگی۔ اس وقت تونس کی پارلیمںٹ میں مذہبی سیاسی جماعت تحریک النہضہ اور قلب موومنٹ کو دوسری جماعتوں پر اکثریت حاصل ہے تاہم ان میں سے کوئی جماعت تنہا حکومت بنانے کی پوزیشن میں نہیں۔

قابل ذکر ہے کہ 46 سالہ المشیشی ایک آزاد شخصیت ہیں۔ انہوں نے الیاس الفخفاخ کی حکومت میں وزیر داخلہ کے عہدے پر فائز کام کیا اور جمہوریہ کے صدر کے سینیر مشیر اور قانونی امور کے انچارج بھی رہے ہیں۔انہوں نے قانون اور سیاسیات میں تونس کے نیشنل اسکول آف ایڈمنسٹریشن میں پوسٹ گریجویٹ کی تعلیم کا سرٹیفکیٹ اور فرانس کے اسٹراسبرگ نیشنل اسکول آف مینجمنٹ سے پبلک ایڈمنسٹریشن میں ماسٹر ڈگری حاصل کی ہے۔