.

سعودی شہری نے 1000 اسفار کے ذریعے سیرت نبوی کے تاریخی مقامات کو محفوظ کر لیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے ایک شہری نے سیرت نبوی کی تاریخ کو سادہ اور پر کشش انداز سے محفوظ کیا ہے۔ اس مقصد کے لیے مذکورہ شہری نے ایک ہزار کے قریب اسفار کیے۔

سیرت نبوی کے میدان کے محقق سمیر برقہ نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ" سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ "میں 40 برس سے سیرت نبوی کی تاریخی اور اس کے یادگار مقامات کی تحقیق سے شغف رکھتا ہوں۔ اس مقصد کے لیے میں نے کتب بینی کی اور بعض یادگار مقامات کا دورہ کیا۔ عملی زندگی سے ریٹائرمنٹ کے بعد میں نے اپنے برسوں پرانے شوق اور شغف کو جلا بخشنے کے بارے میں سنجیدگی سے سوچا۔ لہذا گذشتہ 14 برسوں کے دوران میں نے سیرت نبوی سے متعلق یادگار مقامات کے حوالے سے 1079 اسفار کیے۔ سیرت نبوی کی تاریخ کے حوالے سے میرے اسفار، تحقیق اور مطالعے کا سلسلہ ابھی تک جاری ہے"۔

سمیر برقہ کے مطابق ان کے اسفار میں مکہ مکرمہ، مدینہ منورہ، غار ثور، غار حراء، ہجرت کا راستہ، طائف، خیبر، العلا اور بدر وغیرہ کے مقامات شامل ہیں۔

سعودی محقق نے بتایا کہ ان کے اسفار کا مقصد سیرت نبوی کی تاریخ کی جان کاری حاصل کرنا، اس کو محفوظ کرنا اور لوگوں کو اس سے متعارف کرانا ہے۔

سمیر برقہ نے اپنی گفتگو کے اختتام پر بتایا کہ "میں نے ان تمام اسفار کی روشنی میں 9 دستاویزی کتب تیار کیں۔ ان کے علاوہ رہبر (گائیڈ) کے پیشے سے آگاہی حاصل کی اور سیرت نبوی کے یادگار مقامات کے حوالے سے کئی تحقیقی مطالعے سامنے آئے"۔