.

اسرائیل اسد رجیم کا تین سال میں ایک تہائی فضائی دفاعی نظام تباہ کر چکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیل کی جانب سے گذشتہ تین سال کے دوران شام میں فضائی دفاعی نظام کے خلاف حملے جاری ہیں۔ ان حملوں میں اب تک اسرائیل 4،239 راکٹ اور میزائل داغ چکا ہے جس کے نتیجے میں اسرائیل کاایک تہائی فضائی دفاعی نظام تباہ ہو چکا ہے

اسرائیلی فوج کا اندازہ ہے کہ ان حملوں سے شامی زمینی دفاع / جوابی کارروائیوں کا ایک تہائی تباہ ہو گیا ، لیکن شامی فوج روس کی مدد سے فضائی دفاعی نظام کو دوبارہ فعال کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔

شامی حکومت کی فوج نے اسرائیل کے لڑاکا طیاروں اور میزائلوں کو گرانے کے لیے 844 انٹرسیپٹر میزائل داغے۔ اسی عرصے میں وہ متعدد اسرائیلی میزائل تباہ میں کامیاب رہا۔

گذشتہ اتوار کو اسرائیلی فوج کے ترجمان ایوچائے ادرای نے 'ٹویٹر' پر آرمی چیف آف اسٹاف کے حوالے سے اعلان کیا کہ ایک ہفتہ قبل گولان کی سرحدوں پر نشانہ بننے والا سیل ایرانی ہدایات کے تحت چل رہا تھا۔

ترجمان نے کہا کہ اسرائیل ایرانی جوہری پروگرام کو نشانہ بنانے کے ساتھ شام میں شدت پسندی کے محور کو اپنی پوزیشن مستحکم کرنے سے روک رہا ہے۔

گذشتہ پیر کو اسرائیلی فوج کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان میں کہا گیا ہے کہ اسرائیلی لڑاکا طیاروں نے شام میں فوجی اہداف پر حملہ کیا ہے۔ یہ حملہ "دشمن عناصر" کی جانب سے سرحدی باڑ کے قریب بم نصب کرنے کی کوشش کے ردعمل کے طور پر کیا گیا۔