.

ترک حکام کا بڑے شہر میں تباہ کن بم دھماکے کا منصوبہ ناکام بنانے کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترک حکام نے دعویٰ کیا ہے کہ پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے 'اضنہ' صوبے میں دسیوں کلو گرام 'ٹی این ٹی' دھماکہ خیز مواد قبضے میں لینے اور دہشت گردی کی بڑی کارروائی ناکام بنانے کا دعویٰ‌ کیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ‌ نیٹ کے مطابق ہفتے کے روز ترک وزارت داخلہ نے کہا کہ حکام نے ایک ایسی کارروائی کو ناکام بنا دیا ہے جس میں ایک بڑے شہر میں وسیع پیمانے پر تباہی پھیلانے کی کوشش کی گئی تھی۔

الشرق الاوسط اخبار کے مطابق کل کی اطلاع ملنے کے مطابق ترک سکیورٹی فورسز نے شمال مغربی صوبہ برسا میں پولیس اسٹیشن پر 'داعش' کی طرف سے کی گئی حملے کی منصوبہ بندی ناکام بنا دی۔

اخبار نے مزید کہا کہ سیکیورٹی ذرائع نے (جمعہ کے روز) اطلاع دی ہے کہ انسداد دہشت گردی فورس نے ایک شامی کو "داعش" تنظیم سے تعلق کے الزام میں گرفتار کیا تھا۔ اس نے دوران تفتیش بتایا کہ داعش تھانے کو دھماکے سے اڑانے کا منصوبہ بنا رہی ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ کہ انسداد دہشت گردی حکام نے ایک داعشی جنگجو کو گرفتار کرکے اس کی نشاندہی پر اس کے ٹھکانے سے داعش کے جھنڈے، 3 عدد دھماکہ خیز ڈیوائسزم ، 3 باردی جیکٹ اور دھماکہ خیز مواد کی تیاری میں استعمال ہونے والا خام مال قبضے میں لے لیا۔

اس سے قبل داعش نے گذشتہ برسوں کے دوران ترکی میں متعدد دہشت گردی کی کاروائیاں کرنے کی ذمہ داری قبول کی ہے، جن میں 300 سے زیادہ افراد ہلاک اور سیکڑوں زخمی ہوئے ہیں۔ ان میں آخری واقعہ ترکی میں رینا نائٹ کلب میں نئے سال کی تقریب میں 2017 کے موقع پر ہوا۔استنبول میں ہونےوالے اس دھماکے میں 39 افراد ہلاک اور 69 دیگر زخمی ہو گئے تھے۔