.

سرت شہر میں‌ کسی بھی وقت لڑائی چھڑ سکتی ہے: احمد المسماری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کی نیشنل آرمی کے ترجمان میجر جنرل احمد المسماری نے 'العربیہ' چینل سے بات کرتے ہوئے خدشہ ظاہر کیا ہے کہ سرت شہر میں کسی بھی وقت قومی فوج اور قومی وفاق حکومت کی وفادار ملیشیاوں‌ کے درمیان لڑائی چھڑ سکتی ہے۔

احمد المسماری نے قومی وفاق حکومت کے سربراہ فائز السراج کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ فائز السراج قوم کی آنکھوں میں دھول جھونک رہے ہیں۔ وہ ایک طرف جنگ بندی کی بات کرتے ہیں اور دوسری طرف ان کی وفادار ملیشیائیں سرت میں اپنی قوت جمع کر رہی ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ ترکی کا ایک بحری جنگی جہاز اسلحہ کی بھاری مقدار لے کر سرت کی طرف جاتے دیکھا گیا ہے۔

چند روز قبل ایک بیان میں المسماری نے کہا تھا کہ سرت اور الجفرہ شہر اسلحہ سے پاک نہیں۔ اگرچہ اس وقت سرت میں امن قائم ہے مگر ترکی نے مصراتۃ شہر کو لیبیا میں ملیشیاوں کی عسکری تربیت کے لیے انتظامی اڈہ بنانے کی کوششیں‌ جاری رکھی ہوئی ہیں۔ ترکی کے بحری جہازوں کی الخمس بندرگاہ پر آمد کا سلسلہ جاری ہے۔

المسماری کاکہنا تھا کہ لیبی فوج نے سرت سمیت دوسرے شہروں میں ترکی کی حمایت یافتہ ملیشیاوں کی سرکوبی کے لیے تمام تیاریاں مکمل کر لی ہیں۔

خیال رہے کہ لیبیا میں نیشنل آرمی کے ترجمان کی طرف سےیہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب دوسری طرف دو روز قبل قومی فوج اور قومی فاق حکومت نے ملک گیر جنگ بندی کا ایک عبوری اعلان کیا ہے۔ مبصرین نے اس نئے جنگ بندی کے اعلان کو مشکوک قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس طرح‌ کے اعلانات ماضی میں بھی ہوتے رہے ہیں مگر ان پرعمل درآمد نہیں کیا جا سکا۔