.

مشرق وسطی کے دورے کے سلسلے میں امریکی وزیر خارجہ کی اسرائیل آمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو اپنے مشرق وسطی کے دورے کے مرحلے میں آج پیر کے روز اسرائیل پہنچ گئے۔ یہ بات اسرائیل میں امریکی سفارت خانے نے ٹویٹر پر بتائی۔

سفارت خانے کی جانب سے جاری وڈیو کلپوں کے مطابق وزیر خارجہ مائیک پومپیو تل ابیب کے بن گوریون ہوائی اڈے پر طیارے سے اترے تو ان کے چہرے پر اپنے ملک کے پرچم کے رنگوں والا حفاظتی ماسک لگا ہوا تھا۔

واشنگٹن میں امریکی وزیر خارجہ کے ترجمان کے مطابق مائیک پومپیو اسرائیلی وزیر اعظم بنیامین نیتن یاہو کے ساتھ مشاورت کریں گے۔ بات چیت میں ایران کا معاملہ اور اسرائیل اور مشرق وسطی کے بقیہ ممالک کے درمیان تعلقات خصوصی طور پر زیر بحث آئیں گے۔

اسی طرح پومپیو اپنے اسرائیلی ہم منصب گابی اشکینزی اور وزیر دفاع بینی گینٹز سے بھی ملاقات کریں گے۔

امریکی وزارت خارجہ نے اتوار کے روز پومپیو کے مشرق وسطی کے دورے کا انکشاف کیا۔ اس دورے میں وہ اسرائیل، سوڈان، امارات اور بحرین جائیں گے۔

امریکی وزارت خارجہ نے ایک بیان میں باور کرایا ہے کہ پومپیو کے دورے میں خطے میں ایران کا "شرپسند" کردار زیر بحث آئے گا۔

ایک با خبر ذریعے نے ہفتے کے روز روئٹرز نیوز ایجنسی کو بتایا تھا کہ امریکی وزیر خارجہ پیر کے روز اسرائیل پہنچیں گے۔ اس کے بعد منگل کے روز وہ متحدہ عرب امارات کا رخ کریں گے جہاں وہ اسرائیل اور امارات کے درمیان معمول کے تعلقات کے معاہدے پر بات کریں گے۔ ذریعے نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی درخواست پر بتایا کہ پومپیو کے دورے کے ایجنڈے میں خطے میں ایران اور چین کی جانب سے درپیش سیکورٹی چیلنجوں پر بات چیت بھی شامل ہے۔

العربیہ کے نمائندے کے مطابق پومپیو اسرائیل میں 24 گھنٹے گزاریں گے۔

یاد رہے کہ امارات نے 13 اگست کو اعلان کیا تھا کہ اس کے اور اسرائیل کے درمیان امن معاہدہ طے پا گیا ہے۔ اس موقع پر اماراتی سرکاری خبر رساں ایجنسی "وام" کی جانب سے جاری مشترکہ بیان میں بتایا گیا تھا کہ اسرائیل اور امارات کے درمیان مکمل دو طرفہ تعلقات کے آغاز کے حوالے سے ٹیلیفونک رابطے میں ابوظبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زائد آل نہیان ، امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ اور اسرائیلی وزیر اعظم بنیامین نیتن یاہو کے درمیان سمجھوتا ہو گیا ہے۔

بعد ازاں امریکی صدر نے بتایا کہ امارات اور اسرائیل کے درمیان اس معاہدے پر جس کی رُو سے مزید فلسطینی اراضی کا انضمام نہیں کیا جائے گا ،،، اس پر آئندہ تین ہفتوں کے دوران دستخط ہوں گے۔