.

حزب اللہ اور امل تحریک نے لبنان کے نئے وزیر اعظم کی حمایت کر دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنان میں ایک سینیر سیاسی ذریعے نے خبر رساں ادارے 'رائیٹرز' کو بتایا کہ ایرانی حمایت یافتہ شیعہ ملیشیا حزب اللہ اور تحریک امل نے مصطفیٰ‌ ادیب کو لبنان کا نیا وزیراعظم مقرر کرنے کی حمایت کی ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ وزیراعظم سعد حریری کی قیادت میں قائم فیوچر پارٹی کی طرف سے مصطفیٰ ادیب کو وزیراعظم نامزد کیا گیا ہے۔

العربیہ چینل کے ذرائع کے مطابق لبنان کے صدر میشل عون نے بھی مصطفیٰ ادیب کو نیا وزیراعظم مقرر کرنے کی حمایت کا عندیہ دیا ہے۔

مصظفیٰ ادیب جرمنی میں لبنان کے سفیر رہ چکے ہیں اور انہوں‌نے سابق صدر نجیب میقاتی کے ساتھ طرابلس میں بھی خدمات انجام دی تھیں۔

ایوان صدر نے پارلیمنٹ سے نئے وزیراعظم کے نام پر آج سوموار کے روز بحث کا مطالبہ کیا ہے۔

خیال رہے کہ وزیراعظم حسان دیاب نے 10 اگست کو وزارت عظمیٰ کے عہدے سے استعفیٰ دے دیا تھا۔ انہوں‌نے بیروت بندرگاہ پرہونے والے دھماکوں کو روکنے میں ناکامی کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ اس عہدے پر مزید نہیں رہیں گے۔ صدر میشل عون نے ان کا استعفیٰ قبول کرلیا تھا تاہم نئے وزیراعظم کے انتخاب تک وہ عبوری وزیراعظم کے طور پر خدمات انجام دیتے رہیں‌ گے۔ چار اگست کو بیروت بندرگاہ کےایک گودام میں ہونے والے دھماکوں‌میں‌2750 ٹن المونیم نائیٹریٹ پھٹ گیا جس کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر تباہی ہوئی ہے اور شہر کا ساحلی علاقہ بری طرح تباہ ہوگیا ہے۔