عراق: عرب قبائل کونسل کا ملیشیاؤں کو تحلیل اور غیر مسلح کرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

عراق میں عرب قبائل کونسل کے سکریٹری جنرل ثائر البیاتی کا کہنا ہے کہ ملک میں غیر منضبط اسلحہ ملیشیاؤں کے پاس ہے۔ انہوں نے واضح کیا کہ حکومت کو ان ملیشیاؤں کو تحلیل اور غیر مسلح کرنا چاہیے۔

الحدث نیوز چینل کے ساتھ گفتگو میں البیاتی نے باور کرایا کہ مسلح ملیشیائیں عراق میں انارکی پھیلانے اور سفارتی صدر دفاتر کو نشانہ بنانے کی ذمے دار ہیں۔ انہوں نے زور دیا کہ ان ملیشیاؤں کا اسلحہ ریاست کے لیے سب سے زیادہ خطر ناک ہے۔

وزیر اعظم مصطفی الکاظمی کی حکومت نے ایک مہم کا آغاز کیا جس کا مقصد ہتھیاروں کو ریاست کے ہاتھوں تک محدود رکھنا اور بغداد اور بصرہ میں قانون کی بالادستی کو یقینی بنانا ہے۔ اس کے خاطر خواہ نتائج برآمد نہ ہونے کے باوجود عراقی عوام نے اس مہم کا خیر مقدم کیا۔ عوام نے اسے غیر منضبط ہتھیاروں میں کمی لانے اور ریاست کی رٹ بحال کرنے کے سلسلے میں پہلا قدم قرار دیا۔

گذشتہ چند ہفتوں کے دوران الکاظمی کی حکومت نے جو اہم اقدامات کیے ان میں ملک کی سرحد اور اس کی گزر گاہوں پر کنٹرول اہم ترین رہا۔ یہ گزر گاہیں ماضی میں تہران نواز ملیشیاؤں کے لیے بھاری مالی رقوم پہنچانے اور دیگر چیزوں کی اسمگلنگ کا ذریعہ رہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں