.

عراق میں سیکورٹی کمپنیوں کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی : سرکاری دستاویز میں انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں وزارت داخلہ کی جانب سے جاری ایک دستاویز میں انٹیلی جنس معلومات کے حوالے سے انکشاف کیا گیا ہے کہ ملک میں سیکورٹی کمپنیوں کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی کی گئی ہے۔

پیر کی شب تاخیر سے جاری اس دستاویز میں تمام عراقی اور غیر ملکی سیکورٹی کمپنیوں کو مخاطب کیا گیا ہے۔ دستاویز میں بتایا گیا ہے کہ موصول ہونے والی انٹیلی جنس معلومات کے مطابق امریکی جانب کے ساتھ معاہدہ کرنے والی سیکورٹی کمپنیوں کو نشانہ بنانے کی تیاریاں کی جا رہی ہیں۔ ان معلومات میں کمپنیوں کے ٹھکانے، پتے ، وہاں کام کرنے والوں کی شہریت اور کمپنی کے کام کی نوعیت کے حوالے سے تفصیلات شامل ہیں"۔

دستاویز میں کمپنیوں کو خبردار کیا گیا ہے کہ وہ اس حوالے سے احتیاط برتیں۔

وزارت داخلہ کی جانب سے یہ انتباہ ایران نواز عراقی گروپوں کی دھمکیوں کے بعد سامنے آیا ہے۔ ان گروپوں نے ملک میں امریکی اڈے اور مفادات کو نشانہ بنانے کی دھمکی دی تھی۔

مقامی میڈیا نے پیر کی شب بتایا تھا کہ بغداد کے شمال میں بین الاقوامی اتحاد کی فورسز کے لیے ساز و سامان لے کر جانے والے عراقی ٹرکوں کے قافلے کو دھماکا خیز آلے کے ذریعے نشانہ بنایا گیا۔ سیکورٹی ذرائع کے مطابق دھمکا خیز مواد التاجی عسکری کیمپ سے دست بردار ہونے والی لوجسٹک سپورٹ کی ایک کمپنی کے کنٹینروں کے نزدیک بغداد کے شمال میں الشعلہ کے نزدیک ہائی وے پر پھٹا۔

ایک دوسرے واقعے میں بابل صوبے کے علاقے جبلہ میں بین الاقوامی اتحاد کے لیے لوجسٹک سپورٹ لے کر جانے والے عراقی ٹرکوں کے قافلے کے نزدیک دھماکا خیز مواد پھٹا۔ بغداد کے جنوب میں 100 کلو میٹر کی مسافت پر ہونے والے دھماکے میں کوئی زخمی نہیں ہوا۔

گذشتہ دنوں کے دوران اتحادی افواج کے لیے ساز و سامان کے کنٹینروں کو لے کر جانے والے عراقی ٹرکوں کے قافلوں کو کئی بار نشانہ بنایا جا چکا ہے۔ یہ کارروائیاں ٹرکوں کے ساتھ سیکورٹی اقدامات کیے جانے کے باوجود سامنے آ رہی ہیں۔