.

اقوام متحدہ نے فائز السراج کے اقتدار سے نکلنے کے اعلان کو دلیرانہ فیصلہ قرار دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا میں اقوام متحدہ کے مشن نے وفاق حکومت کے سربراہ فائز السراج کے اس اعلان کو سراہا ہے جس میں السراج نے کہا تھا کہ وہ آئندہ ماہ اکتوبر کے اختتام تک اقتدار ایگزیکٹو اتھارٹی کے حوالے کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔ اقوام متحدہ کے مشن نے اس فیصلے کو دلیرانہ قرار دیا۔

اقوام متحدہ کے سکریٹری جنرل کی خصوصی خاتون نمائندہ اسٹیفنی ولیمز نے جمعرات کی شام انتونیو گوٹیرس کی طرف سے ایک بیان میں فائز السراج کے اس اعلان کے موقع کی اہمیت کو باور کرایا۔ انہوں نے واضح کیا کہ "یہ اعلان لیبیا کے طویل مدت بحران میں ایک فیصلہ کن مرحلے پر سامنے آیا ہے اور اس سے ظاہر ہو رہا ہے کہ صورت حال جوں کی توں رہنے کا کوئی امکان باقی نہیں رہا"۔

بیان میں لیبیائی فریقوں سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ مکمل طور پر اپنی ذمے داری پوری کریں اور اپنے وطن کی خاطر تاریخی فیصلے کریں اور متبادل رعائتیں پیش کریں۔ خصوصی نمائندہ کے مطابق لیبیا میں داخلی سطح پر سیاسی بات چیت کے دوبارہ شروع کرنے کا موقع ہے۔

بیان کے اختتام پر کہا گیا کہ عالمی برادری لیبیا کی خود مختاری کا احترام کرے ، اس کے اندرونی معاملات میں مداخلت کا سلسلہ روک دے اور اقوام متحدہ کی جانب سے لیبیا پر عائد ہتھیاروں کی پابندی کے فیصلے پر مکمل عمل درامد کرے۔

واضح رہے کہ لیبیا میں وفاق حکومت کے سربراہ فائز السراج نے بدھ کی شام اعلان کیا تھا کہ وہ آئندہ ماہ اکتوبر کے اختتام تک اپنے منصب سے دست بردار ہونے اور تمام تر ذمے داریاں نئی ایگزیکٹو اتھارٹی کے حوالے کرنے کے لیے تیار ہیں۔

اس وقت تنازع کے دونوں فریقوں کے درمیان مذکورہ نئی اتھارٹی کے حوالے سے مذاکرات ہو رہے ہیں۔