.

لیبیا میں سیاسی مکالمے کا مقصد قومی یکجہتی کی حکومت اور جلد انتخابات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کے لیے اقوام متحدہ کے مشن کی خاتون سربراہ اسٹیفنی ولیمز نے بعض لیبیائی شخصیات کو لیبیا کے سیاسی مکالمے LPDF میں شرکت کی دعوت دی ہے۔ اس حوالے سے متوقع طور پر 26 اکتوبر سے شروع ہونے والی ملاقاتوں کی بعض تفصیلات سامنے آئی ہیں۔

مکالمے کی دعوت سے متعلق تفصیلات کے مطابق اقوام متحدہ کے مشن کی سرپرستی میں مکالمے کا آغاز رواں ماہ کی 26 تاریخ کو انٹرنیٹ کے ذریعے ہو گا۔ کرونا وائرس کی لہر کے سبب سیشنز اور ملاقاتوں کا سلسلہ ورچوئل ہو گا۔

مکالمے کا دوسرا دور نومبر کے آغاز میں براہ راست صورت میں تونس کی میزبانی میں ہو گا۔

مذکورہ ملاقاتوں کا مقصد لیبیا میں قومی یکجہتی کی حکومت تشکیل دینا ہے جو جلد از جلد ممکنہ وقت میں رام انتخابات کے اجرا کی تیاری کرے۔

یاد رہے کہ اقوام متحدہ کے مشن نے گذشتہ ہفتے اعلان کیا تھا کہ لیبیائی فریقوں کے بیچ جامع بات چیت تونس میں دوبارہ شروع ہو گی تاہم اس حوالے سے شرط عائد کی گئی تھی کہ لیبیا میں آئندہ ایگزیکٹو اتھارٹی میں کسی بھی منصب کا خواہش مند فرد بات چیت میں شریک نہیں ہو گا۔

اسی طرح مشن کی جانب سے جاری بیان میں بتایا گیا کہ اقوام متحدہ جنیوا میں 19 اکتوبر سے مشترکہ عسکری کمیٹی کے دونوں وفود (5 + 5) کے درمیان براہ راست بات چیت کی نگرانی بھی کرے گا۔

مشن کے مطابق مکالمے میں شرکت کے لیے لیبیا کے مختلف مرکزی طبقات سے تعلق رکھنے والے افراد کا انتخاب کیا جائے گا۔ یہ منصفانہ جغرافیائی، نسلی، سیاسی، قبائلی اور سماجی نمائندگی کی بنیاد پر ہو گا۔ اس حوالے سے نوجوانوں اور خواتین کو خصوصی توجہ دی جائے گی۔

یاد رہے کہ حالیہ ہفتوں کے دوران سوئٹزرلینڈ سے لے کر مراکش اور قاہرہ تک بین الاقوامی سطح پر کوششوں اور ملاقاتوں کا سلسلہ بڑھ گیا۔ اس کا مقصد لیبیا کے بحران کے حل تک پہنچنا ہے۔ لیبیا 2011ء میں کرنل معمر قذافی کی حکومت کے سقوط کے بعد سے انارکی میں ڈوبا ہوا ہے۔