.

عرب دنیا کی پہلی خاتون عالمی ادارہ ناشران کی صدر منتخب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

متحدہ عرب امارات سے تعلق رکھنے والی شیخہ بدور بنت سلطان القاسمی عالمی تنظیم برائے ناشران [آئی پی اے] کی صدر منتخب ہو گئی ہیں۔ یہ اعزاز پہلی بار کسی عرب خاتون نے حاصل کیا ہے۔

متحدہ عرب امارات کی سرکاری نیوز ایجنسی امارات پریس ایجنسی [وام] کے مطابق یہ اعلان اتوار کے روز آئی پی اے کی جنرل اسمبلی کانگرس کے ورچوئل اجلاس میں کیا گیا۔ شیخہ بدور جنوری 2021 میں اپنی نئی ذمہ داریاں سنبھالیں گی۔

اس سے قبل گزشتہ دو سال سے شیخہ بدور القاسمی آئی پی اے کی نائب صدر کے طور پر اپنی ذمہ داریاں ادا کر رہی تھیں۔ انہیں اس عہدے پر 2018 میں منتخب کیا گیا تھا۔

شیخہ بدور اس عہدے پر عالمی طور پر دوسری اور عرب ملک سے تعلق رکھنے والی پہلی خاتون ہیں۔ ان سے قبل ارجنٹینا سے تعلق رکھنے والی اینا ماریا کابانیلاس 2004 سے 2008 تک نائب صدر اور صدر کے عہدوں پر فائز رہی ہیں۔

عالمی ادارہ برائے ناشران [آئی پی اے] دنیا بھر کی سب سے مشہور ومعروف ناشر تنظیموں میں سے ایک ہے۔ آئی پی اے ہزاروں ناشرین کی نمائندگی کرتی ہے۔ فرانس کے دارالحکومت پیرس میں 1896 میں قائم کی جانے والی اس تنظیم کا صدر دفتر جنیوا میں واقع ہے۔ اس کے ممبران میں 69 ممالک سے تعلق رکھنے والی 83 سے زائد تنظیمیں شامل ہیں۔

شیخہ بدور کے کیرئیر کے دوران ان کے پیشہ وارانہ کارناموں کا متحدہ عرب امارات کی ثقافت پر گہرا اثر رہا ہے۔ آئی پی اے کے صدر نے 2009 میں امارات پبلشرز ایسوسی ایشن [ای پی اے] کو قائم کیا۔ سنہ 2012ء میں ای پی اے کو آئی پی اے کی مکمل ممبر شپ حاصل ہوگئی۔

بدور القاسمی کی جانب سے شارجہ کے ثقافتی عمل کو پروان چڑھانے کی کوششوں کے سبب 2019 میں شارجہ کو یونیسکو کے عالمی دارالحکومت برائے کتب کے طور پر منتخب کیا گیا۔