.

موساد نے 1993ء سے فخری زادہ کے ساتھ اپنا ایجنٹ لگا رکھا تھا: سیکورٹی ذرائع

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی انٹیلی جنس ادارے موساد نے ایرانی جوہری سائنس دان محسن فخری زادہ کے ساتھ اپنا ایک ایجنٹ لگا دیا تھا جو ان کے بہت قریب رہا۔ یہ بات جمعے کے روز تل ابیب میں سیکورٹی ذرائع نے بتائی۔ فخری زادہ کو گذشتہ جمعے کے روز تہران میں ہلاک کر دیا گیا تھا۔

مذکورہ ذرائع کے مطابق موساد کا یہ ایجنٹ 27 سال قبل 1993ء میں فخری زادہ کے قریب آنے میں کامیاب ہو گیا تھا۔ ایجنٹ نے مقتول سائنس دان کی آواز بھی ریکارڈ کر لی تھی جس میں وہ ایرانی عسکری جوہری منصوبے کے بارے میں گفتگو کر رہے تھے۔

اسرائیلی اخبار یدیعوت احرونوت نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ ایران میں جوہری تنصیبات کے خلاف حملوں کی منصوبہ بندی اور اس پر عمل درامد کا آغاز اسرائیل میں 2008ء میں ہوا۔ اس وقت سابق وزیر اعظم ایہود اولمرت کی حکومت تھی جب کہ ایہود باراک سیکورٹی کے وزیر کے منصب پر فائز تھے۔ اسی دوران اسرائیل کو ایرانی جوہری سائنس دان فخری زادہ کی آواز میں ایک وڈیو ٹیپ موصول ہوئی۔ ٹیپ میں وہ ایران کے خفیہ عسکری جوہری پروگرام کے بارے میں بات کر رہے تھے۔

دوسری جانب ایٹمی توانائی کی عالمی ایجنسی (آئی اے ای اے) نے رکن ممالک کے لیے ایک رپورٹ میں اعلان کیا ہے کہ ایران نے اوقوام متحدہ کے معائنہ کاروں کی ٹیم کو آگاہ کر دیا ہے کہ وہ نطنز میں یورینیم کی افزودگی کے لیے زیر زمین قائم تنصیب میں IR-2m سینٹری فیوجز کے تین اضافی مجموعے نصب کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔