.

حوثی ملیشیا کو دہشت گرد تنظیم قرار دینے سے متعلق امریکا کے ساتھ بات چیت ہوئی ہے :عُمان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سلطنتِ عُمان کے وزیر خارجہ بدر بن حمد بن حمود البوسعيدی کے مطابق مشرق وسطی کے لیے سینئر امریکی سفارت کار ڈیوڈ شینکر نے مسقط حکومت کے ساتھ اس امکان پر بات چیت کی ہے کہ امریکا یمن میں حوثی ملیشیا کو ایک دہشت گرد جماعت قرار دے۔

یہ بات البوسعیدی نے ہفتے کے روز منامہ میں ہونے والے ایک مکالمے کے اجتماع کے دوران کہی۔

عُمانی وزیر خارجہ نے زور دیا کہ یمن میں اقوام متحدہ کی کوششوں کو سپورٹ کرنے کی ضرورت ہے۔ ان کوششوں کا مقصد ملک میں جاری تنازع پر روک لگانے کے واسطے ایک معاہدے تک پہنچنا ہے۔ یہ تنازع حوثی ملیشیا کی جانب سے 2014ء میں آئینی حکومت کا تختہ الٹنے کے بعد سے جاری ہے۔

واضح رہے کہ امریکی ذرائع نے چند روز قبل بتایا تھا کہ وزیر خارجہ مائیک پومپیو حوثی ملیشیا کو جلد ایک دہشت گرد تنظیم قرار دے سکتے ہیں۔ ذرائع کے مطابق امریکی وزیر ایران نواز ملیشیا کو ایک غیر ملکی دہشت گرد تنظیم قرار دینے کے اقدام کو حتمی شکل دے رہے ہیں۔ یہ پیش رفت صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کی جانب سے ایرانی نظام کے ساتھ تعامل کرنے والی تنظیموں پر انتہائی دباؤ کی پالیسی جاری رکھنے کی کڑی ہے۔

واضح رہے کہ جمعے کے روز منامہ مکالمے کا 16 واں ایڈیشن شروع ہوا۔ مکالمے متعدد سربراہان، وزرائے دفاع، وزرائے خارجہ، قومی سلامتی کے مشیران، افواج اور انٹیلی جنس کے سربراہان کے علاوہ ماہرین اور اصحاب رائے شریک ہیں۔

یہ مکالمہ تین روز جاری رہے گا۔ اس دوران سیکورٹی اور خارجہ پالیسی کے امور کے علاوہ مشرق وسطی میں زیادہ چیدہ سیکورٹی چیلنجوں کو زیر بحث لایا جا رہا ہے۔