.

سعودی عرب: کرونا ویکسین لگوانے کے لیے پہلے روز ڈیڑھ لاکھ افراد کا اندراج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی وزارت صحت کے مطابق مملکت میں‌ کرونا ویکسین لگانے کا عمل شروع کر دیا گیا ہے۔ ویکسین لگوانے کے پہلے روز ڈیڑھ لاکھ افراد نے اپنا اندراج کرایا ہے۔ سعودی وزارت صحت کے اسسٹنٹ سیکرٹری ڈاکٹر عبد اللہ عسیری نے العربیہ کو بتایا کہ کرونا وائرس سے بچاؤ کی ویکسین لگوانے کے پہلے دن ڈیڑھ لاکھ سے زیادہ افراد نےاپنے نام لکھوائے۔

انہوں نے کہا کہ رائے عامہ کے جائزوں نے انکشاف کیا ہے کہ لگ بھگ 60 سے 70 فیصد سعودی اور غیرمقامی افراد ویکسین لینے کے خواہاں‌ ہیں۔

جمعرات کو سعودی عرب نے کرونا وائرس سے بچاؤ کی ویکسین مہم کے پہلے مرحلے کا آغاز کیا جس میں 65 سال سے زیادہ عمر کے افراد اور انتہائی خطرے کام کرنے والے کارکنوں کو ویکسین کا ہدف بنایا گیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ویکسین آغاز وبا کے بحران کے خاتمے کی طرف ایک پیش رفت ہے۔

جُمعرات کے روز سعودی عرب کے وزیر صحت توفیق الربیعہ کو کرونا وائرس کی پہلی ویکسین لگائی گئی۔' انہوں نے بحران کے خاتمے کا نقطہ آغاز کا اعلان کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا گیا خادم الحرمین الشریفین اور ولی عہد محمد بن سلمان کی ہدایت کے تحت مملکت میں ویکسین دینےکا عمل وسیع پیمانے پر شروع ہو چکا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ولی عہد ویکسی نیشن کے عمل کی براہ راست نگرانی کریں‌ گے۔ سعودی وزات صحت کا یہ اقدام شہریوں اور مملکت میں مقیم افراد کی صحت کو یقینی بنانے کے لیے اٹھایا گیا ہے۔

سعودی عرب کے ریاستی باشندوں اور غیرملکی افراد کو مفت کرونا ویکسین فراہم کی جا رہی ہے جبکہ وزیر صحت نے تصدیق کی کہ ہمارے پاس مملکت کے تمام شہروں‌ میں ویکسین مراکز کیے جائیں گے۔

ڈاکٹر الربیعہ نے مزید کہا کہ یہ ویکسین لازمی نہیں بلکہ اختیاری ہوگی۔ اس بات پر زور دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ہم ویکسین کو محفوظ بنانے کے خواہاں ہیں، ہم سب کو کرونا کے خلاف خوراک فراہم کرنا چاہتے ہیں۔

ادھر سعودی عرب میں‌ متعدی امراض کمیٹی نے اس بات کی تصدیق کی کہ ویکسینیشن کے عمل میں سب سے پہلے بوڑھے شامل ہیں جبکہ فوڈ اینڈ ڈرگ کمیٹی نے زور دے کر کہا کہ سعودی عرب میں کرونا ویکسین کی فراہمی کی سرکاری سطح‌ پر منظوری دے دی گئی ہے۔

سعودی عرب نے ایک ہفتہ قبل "فائزر / بائینٹیک" ویکسین کے استعمال کی منظوری دی تھی۔ بحرین کے بعد سعودی عرب ویکسین استعمال کرنے والا دوسرا خلیجی ملک بن گیا ہے۔ بعد ازاں کویت اور سلطنت عمان نے بھی اس کے استعمال کی اجازت دی ہے جبکہ متحدہ عرب امارات نے دارالحکومت ابوظبی میں کرونا وائرس کے خلاف ایک ویکسینیشن مہم شروع کی تھی۔ امارات نے چینی کمپنی "سینوفرم" سے یہ ویکسین لی ہے۔

بدھ کی شام ، فائزر ویکسین کی خوراک کی دوسری کھیپ ریاض کے شاہ خالد بین الاقوامی ہوائی اڈے پر پہنچی۔

اس سے قبل پہلی کھیپ دارالحکومت ریاض پہنچائی گئی تھی۔منگل کے روز ، سعودی وزارت صحت نے "مائی ہیلتھ" ایپلی کیشن کے ذریعہ تمام شہریوں اور غیرملکی مقیم افراد کی کرونا ویکسین لینے کے لیے رجسٹریشن شروع کرنے کا اعلان کیا تھا۔