.

ترکی نے داعش کو اسلحہ فراہم کیا اور شواہد مٹا دیے : اِفشا دستاویزات میں انکشاف

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سویڈن کی ویب سائٹ Nordic Monitor کی جانب سے ہفتے کے روز جاری ایک رپورٹ میں ترکی کی انٹیلی جنس کی سرگرمیوں سے متعلق اِفشا ہونے والی دستاویزات پر روشنی ڈالی گئی ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ترکی کے بعض عسکری گوداموں میں ہونے والے دھماکوں کا مقصد اُن ہتھیاروں کے آثار مٹانا تھا جو صدر رجب طیب ایردوآن کی حکومت نے داعش تنظیم کو پیش کیا۔

ترکی میں فوجداری کی اعلی عدالت کی فائلوں سے اِفشا ہونے والی عسکری انٹیلی جنس دستاویزات میں انقرہ میں حکمراں جماعت کی طرف سے گذشتہ برسوں کے دوران دہشت گرد شدت پسند تنظیم (داعش) کے لیے سپورٹ کا انکشاف ہوا ہے۔ دستاویزات سے واضح ہوتا ہے کہ ہتھیاروں کے گوداموں میں ہونے والے کئی دھماکے اس لیے کیے گئے تا کہ داعش تنظیم کو مختلف نوعیت کا اسلحہ فراہم کرنے میں ترکی کی حکمراں جماعت کے ملوث ہونے کے شواہد مٹائے جا سکیں۔ یہ بات انٹیلی جنس کے مرکز کے سربراہ میجر احمد اوزجان کی عدالت کے سامنے گواہی میں بتائی گئی تھی۔

مذکورہ سویڈش ویب سائٹ پر جاری دستاویزات سے ظاہر ہوتا ہے کہ دھماکوں کا نشانہ بنائے جانے والے گودام ترکی کے شہر افیون، اورفا اور قبرص کے شمال میں ترکی کے زیر کنٹرول اراضی میں واقع ہیں۔

رپورٹ کے مطابق ایردوآن حکومت کی جانب سے داعش کو اسلحے کی فراہمی کوئی راز نہیں رہا۔ ستمبر 2014ء میں ترکی کے اخبارTarf نے بتایا تھا کہ داعش کے اسلحے کے ذخیروں میں ایسا عسکری سامان بھی ملا جس پر سرکاری طور پر ترکی میں تیار کیے جانے کی علامت موجود تھی ۔ اس کے نتیجے میں اکبار کو بند کر دیا گیا اور اس کے ایڈیٹر انچیف کو گرفتار کر لیا گیا۔

رپورٹ میں دیگر تفصیلات کے حوالے سے باور کرایا گیا کہ داعش کی جانب سے ترک اسلحہ اور گولہ بارود کا استعمال ،،، ستمبر 2014ء میں اس وقت ترکی کے وزیر دفاع عصمت یلماز کے سامنے پیش کیے گئے ایک سوال کا حصہ بھی تھا۔ یہ سوال رکن پارلیمنٹ لطفو تورکان نے پیش کیا تھا تاہم وزیر دفاع نے اس الزام کی تردید کر دی تھی۔

اسی طرح 2013ء میں ترکی میں القاعدہ کے نیٹ ورک کے حوالے سے ایک فوجداری تحقیق کا آغاز کیا گیا۔ اس دوران یہ انکشاف ہوا کہ دہشت گردوں نے سارین گیس تیار کرنے کے واسطے مطلوب اجزاء ترکی سے حاصل کیے تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں