.

سعودی وزیر توانائی کا 'اوپیک +' کے فوائد کو تحفظ فراہم کرنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے وزیر برائے توانائی شہزادہ عبد العزیز بن سلمان ایک ورچوئل اجلاس سے خطاب میں اوپیک تنظیم کے ممبران اور اس کے اتحادیوں سے گذشتہ ایک کے دوران حاصل ہونے والے فوائد کو برقرار رکھنے پر زور دیا ہے۔

سعودی وزیر توانائی نے کرونا ویکسین کے ٹھوس نتائج کا انتظار کرنے کی ضرورت پر زور دیا اور کہا کہ ویکسینوں کے اثرات اور نتائج کے حوالے سے عالمی ابہام کی شرح اب بھی زیادہ ہے۔

شہزادہ عبد العزیز بن سلمان نے کہا کہ وائرس کی نئی شکل کے سامنے آنے کے بعد ویکسین کے نتائج کے بارے میں پیش گوئی نہیں کی جاسکتی۔ انہوں نے کہا کہ اوپیک + گروپ کو عام طور پر مارکیٹ کے لیے پر امید ماحول کے باوجود چوکس اور محتاط رہنا چاہیئے کیونکہ ایندھن کی طلب اب بھی نازک ہے۔

انہوں نے مزید کہاکہ دنیا کے بہت سے حصوں میں جہاں انفیکشن کی شرح خطرناک حد تک بڑھ گئی ہے ، بندشوں اور پابندیوں کی ایک نئی لہر کا اطلاق ہو رہا ہے۔ یہ وائرس ان ممالک میں معاشی بحالی کی شرح کو لامحالہ متاثر کرے گا۔

وزیر توانائی نے متنبہ کرتے ہوئے کہا کہ اب ہم سرنگ کے آخر میں روشنی دیکھتے ہی۔ ہمیں اپنے عزم کو کمزور کرنے والےفتنوں سے لڑنا ہوگا۔ یہ سچ ہے کہ کرونا وائرس کی ویکسینوں کی آمد خوش آئند ہے اور میں نے پہلے بھی کہا ہے کہ اقتصادی بحالی کی واپسی میں ویکسین سب سے اہم عنصر ثابت ہوگی جو پائیدار بحالی کا باعث بنے گی۔ تاہم ، تیل کی طلب میں ایک ویکسین ڈھونڈنا سب سے اہم چیز نہیں ہے۔

سعودی وزیر توانائی نے بتایا کہ پیداواری ممالک نے گذشتہ سال کے آخر میں پہلی ویکسین کے اعلان کے ساتھ ہی مارکیٹ میں خوشی بہتری کا مشاہدہ کیا لیکن ہمیں ابھی ایک لمبا سفر طے کرنا ہے۔ میں امید کرتا ہوں کہ ماحولیاتی ماحول کے باوجود سب کو محتاط رہنا چاہیئے کیونکہ عالمی ابہام کی سطح اب بھی زیادہ ہے اور عالمی سطح پر تیل کی طلب کم ہے۔۔ تیل ابھی بھی اپنی وبا سے پہلے کی سطح سے نیچے ہے اور ایندھن کی طلب اب بھی نازک ہے خاص طور پر کرونا کی نئی شکل ہوا بازی کے ایندھن کی فروخت کو متاثر کر سکتی ہے۔

پچھلے اوپیک + اجلاسوں کے دوران سعودی عرب نے پیداوار میں اضافے کے لیے زیادہ محتاط رویہ دکھایا ہے ،جبکہ متحدہ عرب امارات ، جو اوپیک کا رکن ہے اور روس جو اس تنظیم کا ممبر نہیں ہے کا کہنا ہے کہ وہ تیزی سے اضافے کو ترجیح دیں گے۔

روسی نائب وزیر اعظم الیگزینڈر نوواک نے پیر کو اس بات کی تصدیق کی ہے کہ وہ امید کرتے ہیں کہ اوپیک + گروپ میں تیل پیدا کرنے والے ممالک پیداواری پالیسی کے بارے میں فیصلے کرنے میں لچک کا مظاہرہ کریں‌ گے۔

نوواک نے مزید کہا کہ وہ امید کرتے ہیں کہ اس سال تیل کی منڈی کوویڈ ۔19 کے خلاف ویکسینیشن کی بدولت بحالی ہو لیکن انہوں نے مزید کہا کہ آئل مارکیٹ میں ابھی بھی بہت زیادہ غیر یقینی صورتحال موجود ہے۔