.

شاہ عبداللہ مکالمہ مرکز بین المذاہب مفاہمت کے لیے سرگرم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شاہ عبدالله عالمی مرکز برائے بین المذاہب و بین الثقافتی مکالمہ کی نئے سال کی پہلی سرگرمی کا انعقاد گذشتہ روز آسٹریا کے دارالحکومت ویانا میں ہوا۔ اس ورچوئل ملاقات میں مرکز کے مینجمنٹ بورڈ کے ارکان نے شرکت کی جن کا تعلق مختلف مذاہب سے ہے۔ ملاقات میں 2021ء کو دنیا کے لیے بہتر بنانے کے سلسلے میں اقدار، یک جہتی اور توقعات پر روشنی ڈالی گئی۔ اس مقصد کے لیے مرکز کے ویژن کو بنیاد بنایا گیا جو تعاون کی دعوت دینے کے ساتھ ساتھ دنیا بھر میں مذاہب اور ثقافتوں کے پیروکاروں کے بیچ مشترکہ انسانی اقدار کے تناظر میں یک جہتی اور مفاہمت کی حمایت کرتا ہے۔

مذکورہ سیشن میں مذاہب اور ثقافتوں میں دل چسپی رکھنے والی سیکڑوں شخصیات نے آن لائن شرکت کی۔ اس دوران انگریزی سے عربی، جرمن اور ہسپانوی زبان میں فوری ترجمے کی خدمت بھی فراہم کی گئی۔

اس موقع پر شاہ عبداللہ مرکز کے سکریٹری جنرل فیصل بن معمر نے کہا کہ "اس ملاقات کا مقصد خود کو اور دوسروں کو یاد دہانی کرانا ہے کہ ہم کویڈ-19 کی وبا کے مقابلے میں اگلے دستوں میں اکیلے نہیں کھڑے ہیں۔ ہمیں اپنے مذاہب کی اقدار کا سہارا حاصل ہے تا کہ انسانوں کے حقوق اور عزت نفس کا تحفظ کر سکیں"۔

بن معمر کے مطابق کرونا کی وبا نے براہ راست ہمارے جینے کے طریقوں کو متاثر کیا ہے۔ یہ وبا ایک سال کے اندر 18 لاکھ افراد کو نگل گئی۔ اس نے ہمیں ایک دوسرے سے دُور کر دیا ، ہماری صحتوں کو ضرر پہنچایا اور ہمارے امن و استحکام کے لیے خطرہ بن گئی۔

مرکز کے سکریٹری جنرل نے واضح کیا کہ تاریخ میں لکھا جائے گا کہ گذشتہ برس ان سالوں میں سے ہے جس کے دوران انسانیت سب سے زیادہ اضطراب کا شکار رہی۔ ایسے میں دنیا بھر میں کروڑوں طبیبوں ، طبی تیمار داروں، سائنس دانوں ، استادوں ، مذہبی قیادت اور پالیسی سازوں نے اپنے کاندھوں پر ذمے داری کا بوجھ محسوس کرتے ہوئے معاونت اور مدد کے لیے ہاتھ بڑھایا۔ اس کا مقصد دوسروں کی زندگیوں کی تجدید کرنا اور ان کے چہروں پر پھر سے مسکراہٹ بکھیرنا ہے۔

بن معمر کے مطابق محبت اور رحم دلی کی آوازیں نفرت اور عداوت کے پیغامات سے زیادہ بلند رہیں۔ انہوں نے زور دیا کہ اگرچہ تمام زبانوں میں "رحم" کے لیے مختلف الفاظ استعمال ہوتے ہیں مگر عالمی سطح پر اس کا مفہوم متفقہ ہے۔ دنیا کے تمام مذاہب اور ثقافتیں امن و محبت کا پیغام دیتی ہیں۔

شاہ عبداللہ مرکز کے سکریٹری جنرل نے اپنے خطاب کے اختتام پر باور کرایا کہ 2021ء کے نئے سال میں انسانیت کو جو بھی چیلنج درپیش ہوں ،،، یہ بات طے ہے کہ بھلائی کی خوش خبریاں افق پر ضرور چمکیں گی۔ انہوں نے کہا کہ نیا سال امید اور آس کا سال ہے۔ بن معمر کے مطابق شاہ عبداللہ مرکز بین المذاہب و بین الثقافتی مکالمے کے ذریعے اپنا مشن جاری رکھے گا۔