منہ اور پاؤں سے مصوری کرنے والا مصری فن کار عالمی مقابلوں میں شرکت کا متمنی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

مصر سے تعلق رکھنے والے رضا فضل انگلیوں سے محروم ہیں تاہم یہ چیز ان کے مصوری کے شوق کی راہ میں حائل نہ ہو سکی۔ انہوں نے اپنی خداد داد صلاحیتوں کے اظہار کے لیے اپنے مُنہ اور پاؤں سے مدد لی اور آخر کار ایک مصور کے طور پر خود کو پیش کر دیا۔

رضا کا تعلق مصر کے صوبے کفر الشیخ میں ایک گاؤں "شباس" سے ہے۔

Egypt: Artist Raza Fazal

رضا فضل نے اپنی معذوری کو چیلنج کرتے ہوئے مصوری کی میدان میں اپنے شوق کو پروان چڑھایا۔ اس دوران انہوں نے اسکول میں پڑھائی کے دوران صوبائی اور ملکی سطح پر مختلف مقابلوں میں شرکت بھی کی۔ یہاں تک کہ وہ مصوری کا تجربہ حاصل کرتے ہوئے فن کار بن گئے۔

فضل نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ ہاتھوں کے بغیر پیدا ہونے کے باوجود انہوں نے اس معذوری کو اپنے ارادوں اور خوابوں کے سامنے دیوار نہیں بننے دیا۔ فضل نے جامعہ الازہر میں فنی تعلیم کے شعبے میں داخلہ لے لیا۔ وہ چار برس تک اپنی تعلیم کے دوران اعلی پوزیشن برقرار رکھنے میں کامیاب رہے اور 2003ء میں فارغ التحصیل ہو گئے۔ بعد ازاں انہوں نے ماسٹرز اور پھر ڈاکٹریٹ کی ڈگری بھی حاصل کی۔

Egypt: Artist Raza Fazal

فضل کے مطابق معذوری کے باوجود انہوں نے مصوری اور فن کے لوازمات اور سامان کو استعمال کرنے کی جدوجہد کی اور وہ فن پاروں کی تیاری کے لیے کسی بھی آلے یا چیز کو بنا کسی دشواری کے استعمال میں لا سکتے ہیں۔

مصری فن کار نے بتایا کہ منہ سے مصوری میں یہ دشواری ہے کہ اس دوران توجہ مرکوز رکھنا آسان نہیں ہوتا اور گردن اور جبڑوں کے پٹھوں پر دباؤ آتا ہے۔

Egypt: Artist Raza Fazal

اپنی گفتگو کے اختتام پر فضل نے کہا کہ ان کی خواہش ہے کہ وہ متعدد نمائشوں کا انعقاد کریں اور بین الاقوامی سطح پر زیادہ بڑے پیمانے پر اپنی شرکت یقینی بنا سکیں۔

رضا فضل اپنے فن پاروں کی بدولت ملکی اور عرب دنیا کی سطح پر متعدد مقابلوں میں نمایاں کارکردگی دکھانے کے ساتھ ساتھ کئی انعامات ، ایوارڈز اور میڈلز بھی جیت چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں