.

شاہ عبدالعزیز آل سعود کے دور کی 90 سال پرانی نادر دستاویز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مملکت سعودی عرب کے بانی شاہ عبدالعزیز آل سعود کے دور کی ایک نادر اور نایاب دستاویز منظر عام پر آئی ہے۔ یہ دستاویز ایک شاہی فرمان سے متعلق ہے جو مملکت کے بانی نے 1352 ہجری میں ڈاک کے انتظامی امور کے حوالے سے جاری کیا تھا۔

یہ دستاویز 'نیشنل سینٹر فار آرکائیوز اینڈ ریکارڈز' کی جانب سے جاری کی گئی ہے۔ دستاویز پر 7 صفر 1352 ہجری کی تاریخ موجود ہے۔ یہ مملکت میں ڈاک کے امور منظم کرنے کے سلسلے میں شاہ عبدالعزیز کا حکم نامہ ہے جو انہوں نے اپنے بیٹے شہزادہ فیصل (شاہ فیصل مرحوم) کے نام ارسال کیا تھا۔ شہزادہ فیصل اس وقت مملکت کی کابینہ کے سربراہ تھے۔

شاہی فرمان میں کہا گیا کہ "مکہ - طائف" اور "مکہ - ریاض" کے درمیان ڈاک کو گاڑیوں کے ذریعے منتقل کیا جائے۔ ان گاڑیوں کی آمدنی اور اخراجات کو ڈاک کی انتظامیہ کے بجٹ میں شامل کیا جائے۔ مزید یہ کہ مقررہ کرائے کی ادائیگی کے بغیر کسی کو بھی ڈاک کے لیے مخصوص گاڑیوں میں سوار ہونے کی اجازت نہ دی جائے۔

شاہی فرمان میں ڈاک ٹکٹ کے بغیر مکتوبات اور پارسلوں کو بھیجنے سے منع کر دیا گیا۔ البتہ سرکاری محکموں کے مراسلوں کو مستثنی قرار دیا گیا۔