.

شام : پانچ سالہ بچی کے اغوا اور اندوہ ناک قتل نے عوامی حلقوں کو ہلا دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شام میں ایک اندوہ ناک واقعے میں نامعلوم افراد نے پانچ سالہ بچی "شہد الحاتم" کو اغوا کرنے کے بعد اس کی لاش ایک بڑے تھیلے میں ڈال کر بچی کے گھر والوں کو بھجوا دی۔

سنہرے بال اور سبز آنکھوں والی اس ننھی کلی کے ساتھ ہونے والے وحشیانہ فعل نے شامی حلقوں کو ہلا کر رکھ دیا۔

شام میں انسانی حقوق کے نگراں گروپ المرصد نے کل جمعرات کی شام بتایا کہ چند روز قبل الرقہ شہر میں اغوا ہونے والی شہد کی لاش اس کے متعلقین کے گھر کے نزدیک بند تھیلے میں مل گئی ہے۔ المرصد کے مطابق اغوا کاروں نے بچی کی رہائی کے بدلے 15 ہزار ڈالر تاوان طلب کیا تھا۔

معلومات سے واضح ہوا کہ بچی کے گھر والے یہ رقم ادا کرنے کی استطاعت نہیں رکھتے تھے۔

المرصد نے بتایا کہ سیرین ڈیموکریٹک فورسز (ایس ڈی ایف) کے زیر کنٹرول الرقہ شہر میں امن و امان کی صورت حال ابتر ہوتی جا رہی ہے۔ اس دوران اغوا اور چوری کی کارروائیوں اور بدکاری کی سرگرمیوں میں اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے۔ المرصد کے مطابق دیر الزور کے مشرقی دیہی اور الحسکہ کے دیہی علاقوں، الرقہ شہر اور اس کے دیہی علاقوں اور منبج کے علاقے میں مسلح گروپوں کے ہاتھوں 246 شہریوں کے ہلاک کر دیے جانے کی تصدیق ہو چکی ہے۔ ہلاک شدگان میں بچے بھی شامل ہیں۔ علاوہ ازیں ایس ڈیف ایف کے 441 جنگجو بھی مارے جا چکے ہیں جن میں مقامی کمانڈر بھی شامل ہیں۔