.

سعودی عرب: فوری ادائیگی کے نظام کا آغاز

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں مرکزی بینک نے آج اتوار کے روز سے فوری ادائیگی کے نظام کا آغاز کر دیا ہے۔ اس سے قبل یہ نظام تجرباتی بنیادوں پر متعارف کرایا گیا تھا۔

اس حوالے سے معاشی تجزیہ کار علی الحازمی نے العربیہ ڈاٹ نیٹ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ "سعودی عرب میں فوری ادائیگی کے نظام کا آغاز مالیاتی سیکٹر کی اہلیت بلند کرنے کی جانب ایک اہم اقدام ہے۔ اس طرح مملکت کا نظام بھی عالمی نظام کے ساتھ ہم آہنگ ہو جائے گا۔ مزید یہ کہ اس پیش رفت سے واضح طور پر بینکوں کے ذریعے رقوم کی منتقلی میں تعطل پر روک لگے گی۔ یہ رقوم ہفتہ وار تعطیلات اور سال کے اختتام کے موقع پر تین سے چار روز میں منتقل ہوتی تھیں جس سے کمپنیوں اور افراد کو بہت نقصان ہوتا تھا"۔

الحازمی کے مطابق یہ 2021ء کے آغاز میں سعودی عرب میں ایک اہم فیصلہ ہے۔ یہ فیصلہ اس بات کی قطعی دلیل ہے کہ مملکت کرونا کی وبا کے دوران تمام جانب بھرپور توجہ دے رہی ہے اور ہر سیکٹر میں پیش رفت کے لیے حقیقی طور پر کام کر رہی ہے۔

سعودی تجزیہ کار نے باور کرایا کہ فوری ادائیگی کے نظام کو متعارف کرانے کے نتیجے میں مزید بین الاقوامی کمپنیاں مملکت میں سرمایہ کاری کی جانب راغب ہوں گی۔

یاد رہے کہ فوری ادائیگی کے نظام کی نگرانی مرکزی بینک کے پاس ہے۔ یہ بینکنگ سیکٹر اور مالیاتی ٹکنالوجی سے متعلق خدمات کے حوالے سے سعودی عرب کی پوزیشن مضبوط بنانے کے واسطے ایک بنیادی قدم ہے۔