.

حفر الباطن میں دوشیزہ پر تشدد کے مرتکب نوجوان کی گرفتاری

پراسیکیوشن آفس ایسے قانون شکن عناصر کی سرکوبی میں کوئی دقیقہ فروگزاشت نہیں کرے گا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے پبلک پراسیکیوٹر آفس کے ایک عہدیدار نے بتایا ہے کہ حفر الباطن کے علاقے میں ایک دوشیزہ پر تشدد کرنے والے نوجوان کو گرفتار کرنے کا حکم دیا ہے۔ گرفتار نوجوان کو پراسیکیوشن کے تفتیشی شعبہ کے حوالے کر دیا گیا ہے جہاں مقدمہ کے فریقوں کو گواہی اور دیگر شواہد پیش کریں گے۔

یہ کارروائی پراسیکیوٹر آفس کو فراہم کردہ مواد کی جانچ اور جائزے کے بعد شروع کی گئی ہے۔

پراسیکیوشن کے عہدیدار نے بتایا کہ ان کا آفس شہریوں کی شخصی آزادی، مملکت کے قانون کو ہاتھ میں لینے والوں کے خلاف سخت کارروائی کرنے میں کوئی دقیقہ فرو گزاشت نہیں کرے گا۔ ایسے افراد کے خلاف سخت قانونی کارروائی کرتے ہوئے انہیں آئندہ جرائم سے باز رکھا جائے گا۔ یہ سزائیں دوسروں کے لیے نشان عبرت کا کام کریں گی۔

یاد رہے حفر الباطن کی ایک دکان میں لگے کیمرے میں ایک سعودی نوجوان کی طرف سے دوشیزہ پر تشدد کی ویڈیو ریکارڈ ہو گئی جو کسی طرح سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی۔ ویڈیو میں پانچ لڑکیاں ایک سڑک پر جا رہی تھیں کہ تین لڑکے ان کے قریب آئے جس میں ایک نے اپنے قریب لڑکی کو مارنا شروع کر دیا۔