.

سعودی فوٹو گرافر نے اصیل گھوڑوں کی فوٹوگرافی میں امتیازی مقام کیسے حاصل کیا؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں اصیل گھوڑوں کی فوٹو گرافی کے شوقین تو بہت ہوں گے مگر ایک نوجوان فوٹوگرافر گھوڑوں کی فوٹو گرافی میں دوسرے مصوروں سے ممتاز مقام رکھتا ہے۔ اس نے رنگ رنگ اصیل عرب گھوڑوں کی مختلف حرکات اور اشکال میں تصاویر کا ایک البم تیار کیا ہے جسے نہ صرف سعودی عرب بلکہ دوسرے خلیجی ملکوں میں بھی پسند کیا گیا۔ اس کی تیار کردہ تصاویر پر اسے سعودی عرب اور خلیجی ممالک کی طرف سے ایوارڈز بھی دیے جا چکے ہیں۔

فوٹو گرافر عبداللہ العکشان بچپن سے فوٹو گرافری کا شوق تھا۔ اس کی عمر 10 سال تھی جب اس نے تصاویر بنانا سیکھ لیں اور ایک کیمرہ بھی حاصل کرلیا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ سے بات کرتے ہوئے العکشان نے کہا کہ میں نے 2009ء میں پیشہ وارانہ فوٹو گرافی کے میدان میں قدم رکھا۔ میں نے اسپورٹس کاروں کی تصاویر لینا شروع کیں۔ مجھے اصیل عرب گھوڑوں سے عشق کی حد تک محبت ہے اور میں‌ نے گھوڑوں کے جمالیاتی حسن کو کیمرے کی آنکھ میں محفوظ کرنا شروع کیا۔

ایک سوال کے جواب میں العکشان نے کہا کہ اس کی ملاقات سنہ 2016ء میں القصیم کے علاقے میں گھوڑوں کے ایک مالک سے ہوئی اور وہ اسے گھوڑوں کے اصطبل میں لے لیا۔ العکشان نے اس کے بعد کئی دوسرے شہروں میں گھوڑوں کے اصطبل میں جا کر اصیل عرب گھوڑوں کی تصاویر لیں۔

العکشان نے سعودی عرب میں قومی ثقافتی ورثے کے رنگوں کے مقابلے میں تیسرا نمبرحاصل کیا جب کہ دبئی میں ہونے والے حمدان بن محمد بن راشد آل مکتوم میں اسے پہلا انعام دیا گیا۔