.

سعودی عرب میں ایک سال کے دوران ایک لاکھ خواتین کی کاروبار کے لیے رجسٹریشن

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کی وزارت تجارت نے انکشاف کیا ہے کہ مملکت میں خواتین کے طبقے میں کاروبار کی طرف رحجان میں اضافہ ہو رہا ہے۔ گذشتہ ایک سال کے دوران ایک لاکھ خواتین نے کاروبار کے لیے رجسٹریشن کرائی۔ وزارت تجارت کا کہنا ہے کہ مملک میں کاروبار کے لیے جو شرائط خواتین کے لیے ہیں وہی مردوں کے لیے بھی مقرر ہیں۔
وزارت تجارت کا کہنا ہے کہ سال 2020ء کے دوران سعودی عرب میں‌ کاروباری سرگرمیوں کے لیے ایک لاکھ خواتین کی رجسٹریشن کی گئی۔ کاروبار کرنے والی خواتین کو ہول سیل، پرچون، گاڑیوں کی مرمت، انجن، موٹرسائیکل، ہوٹلنگ اور دیگر شعبوں میں دلچسپی رکھتی ہیں۔
وزارت تجارت کا کہنا ہے کہ کاروبار کے لیے رجسٹریشن کرنے والی خواتین سے ضروری کوائف مکمل کرنے کے بعد انہیں لائسنس جاری کیے گئے۔ خواتین کے لیے کاروباری سہولیات 2030ء کے اہداف کا حصہ ہیں۔
وزارت تجارت کے مطابق مملکت میں کاروبار کے لیے خواتین کے لیے عمر کی کم سے کم عمر 18 سال مقرر کی گئی ہے۔ سرمایہ کاری کے لیے سرمائے کی حد پانچ لاکھ ریال مقرر کی گئی ہے۔ اس کے علاوہ 'ابشر' ایپ پر فعال رہنا ہوگا۔ سالانہ ٹیکس کی کم سے کم شرح 200 ریال مقرر کی گئی ہے۔