.

سعودی عرب: لیبر مارکیٹ میں خواتین کو با اختیار بنانے کے لیے انجمن کا قیام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں خواتین کو تمام اہم شعبوں میں زیادہ سے زیادہ با اختیار بنانے اور ویژن 2030 کے اہداف کے حصول کے لیے نئے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔ مملکت میں لیبر مارکیٹ میں‌خواتین کو با اختیار بنانے کے لیے قومی سطح‌ پر ایک غیر منافع بخش تنظیم قائم کی گئی ہے۔

مملکت میں ترقی اور اصلاحات کے پروگرام 'ویژن 2030' کے اہداف کے مطابق معاشی ترقی میں خواتین کے کردار کو مزید فعال بنانے اور ان کی صلاحیتوں کو مزید فروغ دینے کے لیے تنظیم کا قیام عمل میں لایا گیا ہے۔

نئی قائم کی گئی 'فیوچر ویمن ایسوسی ایشن' کا اعلان خواتین کے عالمی دن کے موقع پر کیا گیا ہے۔ اس کا مقصد خاندانوں اور لیبر مارکیٹ کی سطح پر سعودی خواتین کو بااختیار بنانے اور متعدد پروگراموں اور اہداف کے ذریعے ترقی اقدامات کے ہزاروں میل کے سفر میں خواتین کی شمولیت ہے۔

"فیوچر ویمن" کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کی چیئر پرن ڈاکٹر غریب الطویھری نے اس بات پر زور دیا کہ سعودی عرب کے پاس موجود انسانی وسائل خواتین اہم حصہ ہیں جنہیں نظرانداز نہیں‌کیا جا سکتا۔ خواتین سعودی عرب میں قومی وسائل کے ذریعہ حاصل کردہ معاشی فواید میں خواتین کی مہارتوں اور صلاحیتیں بنیادی کردار ادا کرسکتی ہیں۔ہم اس بات پر یقین رکھتے ہیں کہ خواتین ملک کی معاشی ترقی کا سنگ بنیاد بن سکتی ہیں۔ خواتین کو معاشی اور معاشرتی شعبوں میں زیادہ سے زیادہ با اختیار بنانا ویژن 2030 میں مقرر کردہ اہداف کا حصہ ہے۔

الطوہیری نے کہا کہ 'فیوچر ویمن ایسوسی ایشن" کو سعودی عرب کی وزارت انسانی وسائل اور سماجی ترقی کی نگرانی میں ایک قومی غیر منفعتی ایسوسی ایشن کے طور پر قائم کیا گیا ہے۔ یہ خواتین کی ترقی ، انہیں بااختیاربنانے ، خواتین میں ترقی کے لیے بیداری کا شعور اجاگر کرنے اور ان کی پیشہ ورانہ صلاحیتوں کو زیادہ سئے زیادہ بہتر بنانا ہے تاکہ خواتین ملک کی پائیدار ترقی کے سفر میں مردوں کے شانہ بہ شانہ کام کرسکیں۔