.

حوثیوں کا نقصان انہیں ہوش کے ناخن لینے پر مجبور کر دے گا : سعودی مندوب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ میں سعودی عرب کے مستقل مندوب عبداللہ المعلمی کا کہنا ہے کہ زمینی معرکوں میں حوثیوں کا نقصان انہیں ہوش کے ناخن لینے پر مجبور کر دے گا۔ المعلمی نے امید ظاہر کی ہے کہ حوثی ملیشیا عقل و دانش کی آواز پر کان دھرے گی۔

پیر کے روز العربیہ سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے المعلمی نے زور دیا کہ یمن کا بحران حل کرنے کے سلسلے میں سعودی عرب کے مجوزہ منصوبے کے حوالے سے عرب دنیا اور عالمی برادی کا موقف نہایت اہم ہے۔ یہ منصوبہ یمنی عوام کے مفاد میں پیش کیا گیا ہے۔

المعلمی نے باور کرایا کہ یمن کے بحران کے حوالے سے سعودی عرب اور امریکا کے مواقف میں مطابقت ہے ،،، امریکی انتظامیہ اس بات کا ادراک رکھتی ہے کہ حوثی ملیشیا ایک دہشت گرد تنظیم ہے جس کو ایران کی حمایت حاصل ہے۔

اس سے قبل سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان بن عبداللہ نے یمن میں جنگ کے خاتمے کے لیے ایک نئے امن منصوبے کا اعلان کیا۔ ایک پریس کانفرنس سے خطاب کے دوران بن فرحان نے واضح کیا کہ سعودی عرب امن منصوبے میں پورے یمن میں اقوام متحدہ کے زیر نگرانی فائر بندی بھی شامل ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ "سعودی عرب کے زیر قیادت اتحادی افواج الحدیدہ بندرگاہ کا محاصرہ نرم کر دیں گی اور بندرگاہ کی ٹیکس کی آمدنی مرکزی بینک میں مشترکہ اکاؤنٹ میں جائے گی۔ اسی طرح متعین علاقائی اور بین الاقوامی مقامات کے لیے صنعاء کے ہوائی اڈے کو دوبارہ کھول دیا جائے گا"۔