.

عراقی وزیراعظم کا دورہ سعودی عرب زمانی اعتبار سے اہمیت کا حامل ثابت ہوگا: سعودی سفیر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق میں سعودی عرب کے سفیر عبدالعزیز الشمری نے کہا ہے کہ کل بدھ کے روز عراقی وزیراعظم مصطفیٰ الکاظمی مملکت کے دورے پر روانہ ہو رہے ہیں۔ ان کا یہ دورہ موجودہ وقت اور حالات کے اعتبار سے انتہائی اہمیت کا حامل ہے۔ اس دورے کے دوران عراقی وزیراعظم اہم نوعیت کے سیاسی، سیکیورٹی اور اقتصادی مسائل پر سعودی قیادت سے بات کریں‌ گے۔ اس کے علاوہ کئی شعبوں میں دو طرفہ تعاون کے معاہدوں کی بھی منظوری دی جائے گی۔

العربیہ اور اس کے برادر ٹی وی چینل الحدث سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ انہوں نے کہا کہ عراقی وزیراعظم سعودی عرب کے ساتھ مزید سرحدی گذرگاہیں کھولنا اور 'عرعر' گذرگاہ کو چوبیس گھنٹے کھلا رکھنے کے خواہاں ہیں۔ عراقی وزیراعظم بین الاقوامی اہمیت کے حامل ایک ایک فٹ بال اسٹیم کو خادم الحرمین الشریفین کو ہدیہ کرنا چاہتے ہیں۔ اس کے علاوہ دونوں ممالک کی قیادت میں رابطہ کونسل کی تیاریوں کے لیے ملاقاتیں جاری ہیں۔

جلد ہی دونوں‌ممالک کی کاروباری شخصیات بھی ملاقات کریں‌گی۔

عراقی اخبارات کے مطابق گذشتہ روز عراقی وزیراعظم مصطفیٰ الکاظمی اور سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے درمیان ہونے والی ٹیلیفونک بات چیت کو اہمیت دی جا رہی ہے۔ ٹیلی فون پر بات چیت میں سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے اپنے 'گرین مڈل ایسٹ' منصوبے کے بارے میں بتایا۔

عراقی اخبار'الزمان' کی رپورٹ کے مطابق مصطفیٰ الکاظمی اور سعودی ولی عہد کے درمیان ہونے والی بات چیت میں 'گرین مڈل ایسٹ' منصوبے پر تفصیل سے بات چیت کی گئی۔

خیال رہے کہ سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے مشرق وسطیٰ میں 50 ارب درخت لگانے کا غیر معمولی اعلان کیا ہے۔ اس منصوبے کا مقصد تیل کی پیدوار سے فائدہ اٹھانے کے ساتھ توانائی کے متبادل ذرائع پیدا کرنا اور ماحول کو تحفظ فراہم کرنا ہے۔ منصوبے کے تحت آئندہ ایک عشرے کے دوران سعودی عرب میں 10 ارب درخت لگائے جائیں گے۔