.

’سرسبز مشرق وسطی منصوبے‘ پر شہزادہ محمد کا اماراتی ولی عھد سے تبادلہ خیال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے ولی عہد اور وزیر دفاع شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز نے مشرق وسطیٰ کو سر سبز بنانے اور ماحولیاتی آلودگی سے نمٹنے کے اپنے غیر معمولی منصوبے ’گرین مڈل ایسٹ‘ پر خلیجی، عرب اور خطے کے دیگر ممالک کی قیادت سے ٹیلیفون پر بات چیت کی ہے۔

سعودی پریس ایجنسی ’’ایس پی اے‘‘ کے مطابق انہوں ‌نے امارات، اردن، جبوتی اور اریٹریا کے رہنماؤں کو اپنے اس منصوبے کے اغراض ومقاصد کے بارے میں تفصیلات سے آگاہ کیا ہے۔ رہنماؤں نے بھی ولی عہد کے اس اقدام کو سراہتے ہوئے اس میں بھر پور تعاون کی یقین دہانی کرائی ہے۔

ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز نے ابوظبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید سے ’سرسبز مشرق وسطی‘ اقدام کے حوالے سے بات چیت کی ہے۔

ولی عہد کے اس منصوبے کے تحت آنے والے چند برسوں کے دوران مشرق وسطیٰ میں 50 ارب درخت لگائے جائیں گے۔ معاصر تاریخ میں یہ سب سے بڑی شجری کاری مہم ہے۔ منصوبے کے تحت تیل کی پیداوار کے ساتھ ساتھ متبادل توانائی کے منصوبوں، آبی اور ساحلی ماحول کے تحفظ اور فطری حیات کے لیے محفوظ قرار دیے گئے مقامات کے تحفظ کا عزم کیا گیا ہے۔

دونوں رہنماؤں کے درمیان ہونے والی بات چیت میں خطے اور پوری دنیا کو درپیش ماحولیاتی چیلنجز اور ان سے نمٹنے کے لیے عرب ممالک کی سطح پر اقدامات کا جائزہ لیا گیا۔

شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز نے مشرق وسطیٰ اقدام کے حوالے سے جبوتی کے صدر اسماعیل عمر جیلہ اور اریٹریا کے صدر اسیاس افورقی سے بھی ٹیلیفون پر بات چیت کی ہے۔

واضح رہے کہ ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے ہفتے کے روز ماحولیاتی آلودگی کے عالمی مسئلے سے نمٹنے کے لیے سعودی سبز اقدام اور مشرق اوسط سبز اقدام کا اعلان کیا ہے۔