.

عراق : بلد کے فضائی اڈے پر راکٹوں سے حملہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عراق کے دارالحکومت بغداد کے شمال میں واقع فضائی عسکری اڈے "بلد" کو آج اتوار کے روز دو راکٹوں کے ذریعے نشانہ بنایا گیا۔

سیکورٹی میڈیا سیل کے اعلان میں بتایا گیا ہے کہ مقامی وقت کے مطابق 12:15 پر بلد ایئر بیس کی بیرونی دیوار پر دو راکٹ آ کر گرے۔ تاہم اس کے نتیجے میں کوئی جانی یا مادی نقصان نہیں ہوا۔ دونوں راکٹوں کو الدوجمہ کے علاقے سے داغا گیا تھا۔

واضح رہے کہ پینٹاگان کی جانب سے پہلے ہی یہ بتایا جا چکا ہے کہ بلد ایئر بیس میں امریکی فوج یا داعش کے خلاف برسر جنگ بین الاقوامی اتحادی افواج کا کوئی اہل کار موجود نہیں ہے۔

کبھی کبھار ان حملوں کی ذمے داری غیر معروف گروپ قبول کر لیتے ہیں جن کے بارے میں ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ ایران نواز مسلح گروپوں کا ہی دوسرا چہرہ ہیں۔

اس سے قبل نئی امریکی انتظامیہ نے بدھ کے روز عراقی حکومت کے ساتھ ورچوئل "اسٹریٹجک ڈائیلاگ" کا آغاز کیا۔ بات چیت میں عراق کی سربراہی وزیر اعظم مصطفی الکاظمی کر رہے ہیں جن کو ایران نواز گروپوں کی جانب سے دھمکیاں موصول ہوتی ہیں۔

عراق میں امریکا اور ایران دونوں ہی کا عسکری وجود ہے۔ امریکا اس بین الاقوامی اتحاد کی افواج کی قیادت کر رہا ہے جو 2014ء سے داعش تنظیم کے خلاف جنگ میں عراق کی مدد کر رہی ہیں۔ عراق میں امریکا کے 2500 فوجی موجود ہیں۔

دوسری جانب تہران عراق میں الحشد الشعبی ملیشیا کو سپورٹ کرتا ہے۔