.
ایران جوہری معاہدہ

نطنز جوہری پلانٹ پرحملے کے بعد اسرائیل کا ایران کے خلاف مزید کارروائی پرغور

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

العربیہ کے نامہ نگار نے بتایا ہے کہ اسرائیل کی سلامتی کے امور سے متعلق کابینہ کمیٹی نے ایران کے ساتھ جوہری معاہدے پر مغربی مذاکرات اور تل ابیب اور تہران کے مابین سلامتی تصادم کی روشنی میں ایرانی مسئلے پر غور شروع کیا ہے۔

العربیہ کے نمائندے نے مزید کہا کہ یہ پہلا موقع ہے جب اسرائیلی کابینہ تقریبا دو ماہ میں دوسرا اجلاس منعقد کیا ہے جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ شام میں ایرانی ٹھکانوں پر خفیہ کارروائیوں یا حملوں کے لیے فوج کو حکومت سے منظوری کی ضرورت نہیں۔

جوہری سرگرمیوں کو بڑھانے کے لئے ایرانی خطرات کے عروج پر، یورینیم کی افزودگی اور سینٹری فیوجز کی تیاری کے لیے سب سے اہم ایرانی تنظیم "نطنز" کو ایک سال کے دوران دوسری بار ایک زبردست حملے کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ کچھ ایرانی عہدے داروں نے اعتراف کیا ہے اس حملے نے ہزاروں سینٹرفیوجز کو تباہ کر دیا ہے۔

ایرانی حکام نے ہفتے کے روز اعلان کیا تھا کہ انہوں نے نطنز جوہری تنصیب پر حملے میں مشتبہ شخص کی شناخت کر لی ہے۔ ایرانی سرکاری ٹیلی ویژن نے ایک رپورٹ نشر کی جس میں اس بات کی تصدیق کی گئی ہے کہ حکام نے مشتبہ شخص کو رضا کریمی کے نام سے شناخت کیا ہے۔

انہوں نے یہ بھی مزید کہا کہ یہ شخص گذشتہ اتوار کو ہونے والے بم دھماکے سے قبل ایران سے فرار ہو گیا تھا۔ ایران نے اس کا الزام اسرائیل پر عائد کیا ہے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ اس کی گرفتاری اور ملک واپس کرنے کے لیے ضروری اور قانونی اقدامات جاری ہیں۔

ایران نے اس سے قبل اعلان کیا تھا کہ ملزم اس سہولت میں انجینئرنگ ٹیموں میں کام کر چکا ہے۔