.

’’اقوام متحدہ غزہ اورغربِ اردن میں اسرائیل کے اقدامات کو غیرقانونی قراردے‘‘

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطینی وزیراعظم محمد اشتیہ نے اقوام متحدہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ اپنی قراردادوں کے تحت غزہ اور غربِ اردن میں اسرائیل کے حالیہ اقدامات کو غیرقانونی قرار دے۔

انھوں نے سوموار کے روز ایک نشری نیوزکانفرنس میں کہا کہ ’’غزہ میں اسرائیل کے سفاکانہ حملوں سے پورے پورے خاندان ختم ہوگئے ہیں۔‘‘

اسرائیل نے غزہ کی پٹی پر مسلسل آٹھویں روز فضائی حملے جاری رکھے ہوئے ہیں۔فلسطینی وزارت صحت کے مطابق غزہ میں ان حملوں میں اب تک 197 فلسطینی شہید ہوچکے ہیں۔ان میں 58 بچّے شامل ہیں۔

العربیہ کے نمایندے نے بتایا ہے کہ آج علی الصباح کے بعد اسرائیلی لڑاکا طیاروں نے غزہ میں کم سے کم 70 فضائی حملے کیے ہیں۔

فلسطینی وزیراعظم نے کہا کہ ’’اسرائیل ہمارے خلاف منظم جرائم کا مرتکب ہورہا ہے اور انھیں دنیا کو دکھانے کے لیے براہ راست نشر کررہا ہے۔‘‘

اتوار کو غزہ شہر پر اسرائیل کے فضائی حملوں میں متعدد عمارتیں تباہ ہوگئی تھیں اورسب سے بڑے شفاء اسپتال کی جانب جانے والی مرکزی شاہراہیں ٹوٹ پھوٹ گئی تھیں۔گذشتہ ہفتے کے دوران میں اسرائیلی بمباری میں زخمی ہونے والے فلسطینیوں کو اسی اسپتال میں علاج کے لیے منتقل کیا جاتا رہا ہے۔

محمد اشتیہ نے صحافیوں کو بتایا ہے کہ اس وقت فلسطینی حکام غزہ میں اسرائیلی جارحیت سے متاثرہ افراد کو انسانی امداد بہم پہنچانے کے لیے مصر اور بین الاقوامی تنظیموں کے ساتھ مل کر کام کررہے ہیں۔