.

'او آئی سی' کی فلسطین میں کشیدگی میں کمی کے لیے سعودی خدمات کی تحسین

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسلامی تعاون تنظیم 'او آئی سی' نے سعودی عرب کی طرف سے فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی پر اسرائیلی بمباری رکوانے اور القدس میں کشیدگی میں‌ کمی کے لیے کی جانے والی خدمات کی تحسین کی ہے۔

جدہ میں قائم 'او آئی سی' کے صدر دفتر سے جاری ایک بیان میں خادم الحرمین الشریفین سلمان بن عبدالعزیز کی طرف سے فلسطینی صدر محمود عباس کو ٹیلیفون کرکے انہیں اپنی ہرممکن حمایت کا یقین دلانے کو بھی سراہا۔

شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے صدر محمود عباس سے بات کرتے ہوئے مقبوضہ بیت المقدس میں اسرائیلی فوج کے مظالم اور غزہ کی پٹی پر وحشیانہ بمباری میں نہتے شہریوں کو نشانہ بنانے کی شدید مذمت کی۔ انہوں نے اسرائیلی بمباری سے زخمی ہونے والے فلسطینیوں کی جلد صحت یابی کی دعا کی۔

انہوں نے کہا کہ سعودی عرب نے غزہ کی پٹی اور القدس میں اسرائیلی کارروائیاں روکنے کےلیے ہرسطح پر رابطہ کیا۔ سعودی عرب نے اسرائیل پر جنگ بندی کے لیے دباؤ ڈالنے کے لیے تمام موثر فورمز پر رابطہ کیا۔
دوسری جانب صدر محمود عباس نے مملکت کے فلسطین کے بارے میں شاہ عبدالعزیز کےدور سےچلے آ رہے موقف کو سراہا۔ ان کا کہنا تھا کہ غزہ کی پٹی کے خلاف اسرائیلی ریاست کی جارحیت روکنے کے لیے سعودی عرب کی کاوشوں‌کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔

او آئی سی کے رکن ممالک کی طرف سے غزہ کی پٹی میں جاری خون خرابہ روکنے کے لیے تنظیم کے رکن ممالک کی طرف سے خدمات، سلامتی کونسل کے مسلمان رکن ملکوں، سعودی عرب کی وزارت خارجہ اور او آئی سی کےموجودہ سیشن میں فلسطینیوں کی حمایت میں کی جانے والی کوششوں کو بھی سراہا۔