.

احمدی نژاد کی ایران کے زوال پذیر ہونے اور ملک ٹوٹنے کے خطرے کی وارننگ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سابق ایرانی صدر محمود احمدی نژاد نے ایران کے زوال پذیر ہونے اور ملک کے ٹوٹنےسے متعلق انتباہ کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ ملک کے حالات خراب ہیں اور وہ ملک کی تباہی میں شریک نہیں بننا چاہتے ہے۔

احمدی نژاد کی ترجمان نیوز ویب سائٹ 'دولت بہار' نےتہران کی سیکیورٹی کے ذمہ دار پاسداران انقلاب کے'ثا راللہ' بریگیڈ کےکمانڈر جنرل حس حسین نجات کے حوالے سے بتایا کہ جنرل نجات نے صدارتی امیدواروں کےناموں کے اعلان کے روز انہوں نے تہران میں احمدی نژاد کے گھرپر سابق صدر سے ملاقات کی۔

جنرل نجات سابق صدر کو انتخابات میں حصہ لینے کے لیے نا اہل قرار دینے کے فیصلے کے بارے میں بتانے آئے تھے۔ انہوں‌نے سابق صدر سے تعاون ، خاموشی اور گھر میں قیام پذیر رہنے پر زور دیا

ویب سائٹ میں احمدی نژاد کے بیانات کا حوالے سے بتائا ہے کی جب انہیں پاسداران انقلاب کے کمانڈر نے ملاقات کی تو اس موقعے پر احمدی نژاد نے متنبہ کیا کہ ملک کی معاشی صورتحال افسوسناک ہے۔ معاشرتی صورتحال تباہ ہونے والی ہے اور تفرقے کے لحاظ سے ثقافتی صورتحال ناقابل بیان ہے۔

اپنے ملک میں سیکیورٹی کی صورتحال پراحمدی نژاد نے کہا کہ انتخابات میں حصہ لینےسے روکنے کےاعلان کے بعد کے اثرو نفوذ رکھنے والے طبقے نے ملک کے کاروبار میں بڑا دھچکا لگایا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ملک کمزور ہے اور یہاں غدار موجود ہیں۔