.

سعودی عرب میں اذان اور اقامت کے درمیان معمول کا وقفہ بحال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے وزیر برائے مذہبی امور ڈاکٹر عبداللطیف آل الشیخ نے کل اتوار کے روز ملک بھر کی مساجد کی انتظامیہ کو ایک سرکلر جاری کیا ہے جس میں کرونا وبا کے پیش نظر ہیلتھ کمیٹی کی طرف سے جاری کردہ ہدایات اور ایس اوپیز پر سختی سے عمل درآمد پر زوردیا گیا ہے۔

انہوں نے نمازیوں پر کرونا ’ایس او پیز‘ پرعمل درآمد کی ہدایت کرتے ہوئے مساجد میں آتے وقت چہروں کو ماسک سے ڈھانپنے، اپنی جائے نماز ساتھ لانے، مساجد میں داخل ہوتے اور باہر نکلتے وقت رش سے بچنے اور نمازیوں کے درمیان ڈیڑھ میٹر کا فاصلہ رکھنے کی ہدایت کی ہے، تاہم دو صفوں کے درمیان ایک صف خالی چھوڑنے کی شرط منسوخ کردی گئی ہے۔

اذان اوراقامت کے درمیان وقفہ بحال

سعودی عرب کے وزیر مذہبی امور نے کرونا وبا کے دنوں میں مساجد میں اذان اور نماز کے لیے اقامات کے درمیان وقفے میں کی گئی کمی منسوخ کرتے ہوئے سابقہ روٹین بحال کردی ہے۔

نماز فجر سے قبل ملک بھرکی مساجد میں اذان اور اقامت کے درمیان 25 منٹ کا وقفہ ہوگا۔ نماز مغرب میں 10 منٹ اور دیگر تمام نمازوں کی اذان اور اقامت کے درمیان 20 منٹ کا وقفہ بحال کردیا گیا ہے۔ جمعہ کے روز نمازجمعہ سے ایک گھنٹہ قبل مساجد کو کھول دیا جائےگا جبکہ نماز کے آدھے گھنٹے بعد مساجد کو بند کیا جائے گا۔ اسی طرح جمعہ کے خطبے اور نماز کا دورانیہ منٹ تک محدود کرنے کا فیصلہ بھی منسوخ کردیا گیا ہے۔