.

اربوں ریال جعلی بینک کھاتوں کے ذریعے بیرون ملک منتقل، سعودی اینٹی کرپشن کی کارروائی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب میں کنٹرول اینڈ اینٹی کرپشن اتھارٹی (نزاہہ) کے ذمے دار ذرائع کے بیان کے مطابق اتھارٹی نے گذشتہ عرصے کے دوان میں متعدد فوجداری مقدمات کا آغاز کیا ہے۔ اس سلسلے میں ملوث افراد کے خلاف ضابطے کے مطابق اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

اس حوالے سے مقدمات کی تعداد 9 ہے۔ بدعنوانی کے سلسلے میں جن افراد کو حراست میں لیا گیا ہے ان میں بینک کے 3 ملازمین، بلدیاتی، دیہی و ہاؤسنگ کے امور کی وزارت کے 2 ملازمین، تجارتی عدالت کا ایک جج، سرکاری استغاثہ کا ایک رکن، ایک نوٹری، ایک یونیورسٹی میں تدریسی اتھارٹی کا رکن، وزارت تعلیم کے زیر انتظام حفظِ قرآن کے ایک کمپلیکس کی پرنسپل، افرادی قوت اور سماجی بہبود کی وزارت میں سوشل سیکورٹی یونٹ کا ڈائریکٹر، مذکورہ وزارت کا ایک نگراں، وزارت صحت کا ایک اہل کار، متعدد مقامی شہری اور 17 غیر ملکی مقیمین شامل ہیں۔

ان تمام معاملات میں 516520778 سعودی ریال کی بدعنوانی کا ارتکاب کیا گیا۔ گرفتار کیے جانے والے افراد نے مملکت میں ملازمت کرنے والے غیر ملکیوں کے نام سے جعلی بینک کھاتے کھول رکھے تھے جنہیں اربوں ریال کی غیر قانونی طریقے سے طریقے سے بیرون ملک ترسیل کے لیے استعمال کیا گیا۔

کنٹرول اینڈ اینٹی کرپشن اتھارٹی نے باور کرایا ہے کہ وہ سرکاری مال ہتھیانے والوں اور ذاتی مفاد کے لیے ملازمت کو استعمال کرنے والوں اور مالی اور انتظامی بدعنوانی میں ملوث ہر شخص کے خلاف قانون وضابطے کی کارروائی جاری رکھے گی۔