.

تاریخی نوادارات سے متعلق متنازع فتوی ، مصری مبلغ کے خلاف رپورٹ درج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

مصر میں سمیر صبری نامی ایڈوکیٹ نے معروف مصری مبلغ محمد حسان کے خلاف پراسیکیوٹر اور ریاستی سیکورٹی پراسیکیوشن میں رپورٹ جمع کرا دی ہے۔ یہ اقدام محمد حسان کی جانب سے آثار قدیمہ اور نوادارات کے متعلق متنازع فتوی جاری کرنے کے بعد سامنے آیا ہے۔

ایک ٹی وی پروگرام میں محمد حسان سے آثار قدیمہ کے لیے کھدائی کے بارے میں سوال پوچھا گیا تھا۔ اس کا جواب دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ "اگر یہ تاریخی آثار اور نوادارات آپ کی ملکیت میں موجود زمین یا گھر میں ہیں تو یہ آپ کے لیے حلال ہیں اور ریاست یا کسی اور کو کوئی حق نہیں کہ ان کو لے ... یہ آپ کو اپنی زمین سے ملا ہے تو یہ سب آپ کا ہے"۔

محمد حسان
محمد حسان

ایڈوکیٹ سمیر صبری کے مطابق مصری مبلغ کے فتوے نے کئی کمزور شخصیت افراد کو حجت فراہم کر دی کہ وہ اپنے گھروں اور زمینوں سے آثار قدیمہ کے لیے کھدائی کر کے ان چیزوں کو اپنے مفاد کے لیے فروخت کریں۔ یہ لوگ بھول گئے کہ یہ نوادرات ریاست کی ملکیت ہیں اور ریاست کو ان میں تصرف کا حق ہے۔

ایڈوکیٹ کے مطابق مصری مبلغ نے اس طرف دھیان نہیں دیا کہ کہ ان کی بات سے آثاریاتی نوادرات کی لوٹ مار جیسے جرم کا جواز مل گیا ہے۔