.

منظور شدہ ویکسینوں کی آمیزش کے محفوظ ہونے کی تصدیق کرتے ہیں : سعودی وزارت صحت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی وزارت صحت کے سرکاری ترجمان ڈاکٹر محمد العبد العالی نے باور کرایا ہے کہ عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او) کی جانب سے کرونا ویکسینوں کی آمیزش کے حوالے سے جاری موقف کے بارے میں میڈیا میں زیر گردش رپورٹیں درست نہیں۔

منگل کے روز سرکاری اکاؤنٹ پر کی گئی ٹویٹ میں ترجمان نے کہا کہ "بین الاقوامی تحقیق اور مختص سائنسی کمیٹیوں کی بنیادی پر ہم باور کراتے ہیں کہ سعودی عرب میں ہمارے پاس منظور شدہ ویکسینوں کی آمیزش محفوظ ہے۔ یہ اقدام عالمی ادارہ صحت اور کئی ملکوں میں منظور شدہ ہے"۔

عالمی ادارہ صحت نے پیر کے روز کرونا وائرس کے خلاف استعمال ہونے والی ویکسین کی کئی اقسام کی آمیزش کو "غلط رجحان" قرار دیا تھا۔ ادارے کے مطابق اس کے نتیجے میں بد نظمی کی صورت حال پیدا ہو جائے گی۔

عالمی ادارہ صحت کی ایک سینئر سائنس دان ومیا سوامینتھن کے مطابق "یہ ایک نہایت خطر ناک اقدام ہے۔ ویکسین کو اکٹھا کرنے کا مسئلہ ہو تو اس حوالے سے ہمارے پاس معلومات اور شواہد نہیں ہیں"۔

سعودی وزارت صحت کے اعداد و شمار کے مطابق اب تک مملکت میں کرونا وائرس (کووڈ-19) کی 20,443,456 خوراکیں دی جا چکی ہیں۔ ان میں 1.78 کروڑ پہلی خوراک اور 25 لاکھ دوسری خوراک ہیں۔

گذشتہ 24 گھنٹوں میں شہریوں اور غیر ملکی مقیمین کو 3.982 لاکھ نئی خوراکیں دی گئیں۔

سعودی وزارت صحت کی جانب سے کرونا ویکسین کے پہلے مرحلے کا آغاز گذشتہ برس 17 دسمبر کو ہوا تھا۔ اس سلسلے میں دوسرا مرحلہ 18 فروری کو شروع ہوا۔